حجاز مقدس پر کوئی بھی حملہ پوری اسلامی دنیا اورہر مسلمان پر حملہ ہے ‘ محمد علی درانی

حجاز مقدس پر کوئی بھی حملہ پوری اسلامی دنیا اورہر مسلمان پر حملہ ہے ‘ محمد ...

 لاہور (خصوصی رپورٹ) سابق وفاقی وزیر محمد علی درانی اور بلوچستان کے وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے کہا ہے کہ حجاز مقد س پر کوئی بھی حملہ یا سازش کسی ریاست یا علاقہ پر حملہ نہیں بلکہ پوری اسلامی دنیا اور ہر مسلمان پر حملہ ہے۔ اور کوئی بھی مسلمان ایسی صورت میں غیرجانبدار نہیں رہ سکتا۔اس سارے قضیہ کا فرقہ واریت سے کوئی تعلق نہیں، اس معاملے کو فرقہ وارانہ بنانا قطعی غیردانشمندی اور غیرحیقیقت پسندانہ ہے۔ وہ سول سوسائیٹی فرنٹ کے زیراہتمام تمام شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی ممتاز پاکستانی خواتین کی ’’یمن بحران کے تناظر میں پاکستان کے سعودی عرب سے تعلقات‘‘ کے موضوع پر منعقدہ پہلی کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ اس موقع پر کونسل آف پاکستان نیوز پیپرز ایڈیٹرز (سی پی این ای) کے صدر مجیب الرحمن شامی، سینئر صحافی ضیاء شاہد، سینئر اینکراور کالم نگارسلیم صافی، سول سوسائیٹی فرنٹ کے چئیرمین رخام خان اور ممتاز خواتین شخصیات نے بھی خطاب کیا۔ سابق وفاقی وزیر اطلاعات محمد علی درانی نے کہاکہ حجاز مقد پر کوئی بھی حملہ کسی ریاست یا علاقہ پر حملہ نہیں بلکہ پوری اسلامی دنیا اور ہر مسلمان پر حملہ ہے۔ اور کوئی بھی مسلمان ایسی کسی صورتحال میں غیرجانبدار نہیں رہ سکتا۔ انہوں نے کہاکہ جس انداز میں حکومت پاکستان کی سطح پر یمن بحران کے معاملہ سے نبردآزما ہوا گیا، وہ سنجیدہ سوچ رکھنے والے تمام طبقات کے لئے دھچکا اور پاکستان کے دوستوں کو انتہائی منفی پیغام کا باعث بن گیا۔ آج پاک سعودی تعلقات اپنی تاریخ کے مشکل ترین دوراہے پر کھڑے ہیں۔ ساٹھ سال تک تعاون کرنے والے سعودی عرب کو آج ہمارے تعاون کی ضرورت پڑی تو ہماری حکومت نے لیت ولعل اور دوستی کے تقاضوں کے منافی رویہ اپنا لیا۔ محمد علی درانی نے سول سوسائٹی فرنٹ کو پاک سعودی تعلقات کی مضبوطی کے حوالہ سے پاکستانی خواتین کی نمائندہ پہلی کانفرنس منعقد کرنے پر مبارکباد دی اور شرکاء کے جذبہ کو پاکستان اور اسلامی دنیا کے درمیان تعلقات کو مضبوط بنانے میں اہم قرار دیا۔ انہوں نے کہاکہ سعودی عرب اور پاکستان کی خواتین پر مشتمل ’سعودی پاک خواتین کونسل‘ کے قیام کی تجویز قابل تحسین ہے جس پر جلد از جلد عملدرآمد کو یقنی بنانے کی ضرورت ہے۔بلوچستان کے وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے کہا کہ جب کوئی دوست ملک مدد مانگتا ہے تو کسی تحقیقی کے بغیر اس کی مدد کرنی چاہئے۔ ثالثی کی بات حقائق کے تناظر میں درست نہیں کیونکہ ثالثی کے لئے دو فریق ہونے ضروری ہیں۔ انہوں نے کہاکہ اس سارے قضیہ کا فرقہ واریت سے کوئی تعلق نہیں، اس معاملے کو فرقہ وارانہ بنانا قطعی غیردانشمندی اور غیرحیقیقت پسندانہ ہے۔ یہ موقع ایسا ہے کہ ہمیں سعودی عرب کو تنہائی کا احساس نہیں ہونے دینا چاہیے بلکہ ایک دوست کی طرح ساتھ کھڑے ہونا چاہیے۔ کونسل آف پاکستان نیوزپیپرز ایڈیٹرز (سی پی این ای) کے صدر مجیب الرحمن شامی نے کہا کہ پاکستانی پارلیمان کی جانب سے قرارداد میں غیرجانبداری کے لفظ نے تمام تناظر کو ہی تبدیل کرکے رکھ دیا۔ ہم مناسب الفاظ استعمال کرسکتے تھے لیکن جو پیغام گیا وہ بہت افسوسناک تھا جس نے دوست ممالک میں بہت فاصلہ پیدا کیا۔ انہوں نے کہاکہ غیرجانبدار کے لفظ سے جو زخم لگا ہے، وہ آسانی سے مندمل نہیں ہوگا۔ حکومت اور سیاسی جماعتوں کی جانب سے اس معاملہ میں غیرحکیمانہ انداز کا مظاہرہ ہوا۔ انہوں نے اس بات پر ضرور دیا کہ ایسے نازک موقع پر ایک دیرینہ قابل اعتماد دوست کی حیثیت سے ہمارا رویہ مختلف ہونا چاہیے تھا۔ اس موقع کو ہمیں دوستی کو آگے بڑھانے کے لئے استعمال کرنا چاہیے تھا ناکہ اس میں دراڑیں پیدا کی جاتیں۔ چیف ایڈیٹر خبریں ضیاء شاہد نے کہا کہ حرمین شریفین کا تحفظ اور اس سے ہر مسلمان کا روحانی اور قلبی تعلق سعودی عرب میں برسراقتدار کسی حکمران یا حکومت سے بالاتر ہے۔ یمن میں ہم فوج نہ بھیجیں لیکن سعودی عرب کے دفاع کے لئے ہمیں ہر صورت افواج بھیجنی چاہئیں۔ سعودی عرب کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھنے و الے میزائلوں کی باغیوں کو فراہمی کی اطلاعات جب سامنے آئیں تو کوئی مسلمان کیسے اس پر چُپ بیٹھ سکتا ہے؟ مکہ مدینہ کی حرمت اور تحفظ پر ہم سب کچھ قربان کرنے کے لئے تیار ہیں۔ سینئر اینکر اور کالم نگار سلیم صافی نے کہاکہ دوطرفہ تعلقات کے تناظر میں ہمیں سعودی عرب کی مدد پر ہی توجہ مرکوز کرنی چاہئے کیونکہ سعودی عرب نے ان ممالک جن کی پاکستان سے سرحدیں ملتی ہیں، کی نسبت ہر مشکل میں پاکستان کی بھرپور اور کھل کر مدد کی۔ انہوں نے کہاکہ دوممالک کے دوطرفہ تعلقات میں کسی تیسرے ملک کی رائے کی اہمیت نہیں دی جانی چاہیے۔ پاکستان نے یمن تنازعہ کے اندر دوستی کے تقاضوں کے منافی مس ہینڈل کیا بلکہ اس سفارتی نزاکتوں اور آداب کا بھی خیال نہیں رکھاگیا۔

مزید : صفحہ اول