عالمی برادری کشمیری،فلسطینیوں کو حق خود ارادیت دلوا ئے: سرتاج عزیز کا سربراہ اجلاس سے خطاب

عالمی برادری کشمیری،فلسطینیوں کو حق خود ارادیت دلوا ئے: سرتاج عزیز کا سربراہ ...
عالمی برادری کشمیری،فلسطینیوں کو حق خود ارادیت دلوا ئے: سرتاج عزیز کا سربراہ اجلاس سے خطاب

  

اسلام آباد(یوا ین پی) پاکستان نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ کشمیری اور فلسطینی عوام کو ان کا حق خود ارادیت دلوانے کےلئے اپنا کردار ادا کرے۔

وزیراعظم کے مشیر برائے قومی سلامتی و خارجہ امور سرتاج عزیز نے انڈونیشیا کے دارالحکومت جکارتہ میں جاری ایشیائی و افریقی ممالک کے سربراہ اجلاس سے خطاب میں کہا کہ یہ ایک المیہ اور ناقابل قبول صورتحال ہے کہ کشمیر اور فلسطین کے مکین بدستور اپنے حق خودارادیت سے محروم ہیں۔ انہوں نے یاد دلایا کہ 1955ء میں ایشیائی و افریقی ممالک کے سربراہان کی بنڈونگ کانفرنس میں حق خود ارادیت سمیت بنیادی انسانی حقوق کے احترام پر خصوصی توجہ مرکوز کی گئی تھی اور پاکستان اس کانفرنس کا اہتمام کرنے والے ممالک میں شامل تھا۔ سرتاج عزیز نے اس موقع پر ایشیائی و افریقی ممالک پر باہمی تعاون کو مضبوط کرنے اور امن اور ترقی کے چیلنجز سے مل کرنمٹنے پر زوردیا اورکہا کہ اس حوالہ سے بنڈونگ کانفرنس میں متعین کردہ اصولوں کو مد نظر رکھا جائے جو اب بھی قابل عمل ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایشیائی و افریقی ممالک2015ء کے بعد کے ترقیاتی ایجنڈا جس میں غربت کے خاتمہ اور پائیدار ترقی پر خصوصی توجہ دی گئی ہے ، کے اہداف کے حصول کےلئے اجتماعی کوششیں کریں۔ جنوب جنوب تعاون ایشیا اور افریقہ کی ترقی میں اہم ترین کردار ادا کرے گا۔ دونوں براعظم دنیا کی 75 فیصد آبادی کا مسکن ہے لیکن عالمی جی ڈی پی می ان کا حصہ صرف30 فیصد ہے۔ اس صورتحال میں جنوبی نصف کرہ کے ممالک کے درمیان تجارتی معاہدے اور سب سے کم ترقی یافتہ ممالک کی امداد بے حد اہم ہے۔ اس حوالہ سے خشکی سے گھرے ، ترقی پذیر ممالک اورچھوٹے جزائر کی ترقی کے حوالہ سے اہداف کے حصول میں مدد کی جانی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان دہشت گردی سے نمٹنے کےلئے بھرپورعزم کے ساتھ اقدامات کررہا ہے اور اس سلسلہ میں آپریشن ضرب عضب اور نیشنل ایکشن پلان خاص طور سے قابل ذکر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی سے سب سے زیادہ متاثرہ ایشیائی افریقی ممالک کو نہ صرف ایک دوسرے کے تجربات سے استفادہ کرنا چاہئے بلکہ دہشت گردی کو شکست دینے کےلئے اس کی بنیادی وجوہات پر توجہ دینے سمیت مل کر اقدامات کرنا چاہئیں۔

انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کے چارٹر میں موجود تمام ریاستوں کے اندرونی معاملات میں عدم مداخلت اور ان کی جغرافیائی سلامتی و خودمختاری کے احترام جیسے اصول پائیدار عالمی امن وترقی کی بنیاد فراہم کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایشیا و افریقہ کے ساتھ ساتھ لاطینی امریکا کے ممالک امن و ترقی کے مشترکہ اہداف کے حصول کےلئے ایک طاقتور بلاک بنا سکتے ہیں۔ ہمیں اجتماعی بھلائی کےلئے اپنے اصولوں پر بے خوف ہوکر قائم رہنا چاہئے اور باہمی اتحاد کو مضبوط بنانا چاہئے۔ واضح رہے کہ وزیراعظم کے مشیر (آج) جمعہ کو بنڈونگ میں ایشیائی افریقی کانفرنس کی 60 ویں سالگرہ کی تقریب میں بھی پاکستان کی نمائندگی کریں گے۔

مزید : اسلام آباد /اہم خبریں