میونسپل کا رپوریشن ملتان کا اجلاس، پانامہ کیس کے نعروں سے گونج اٹھا

میونسپل کا رپوریشن ملتان کا اجلاس، پانامہ کیس کے نعروں سے گونج اٹھا

ملتان (خبرنگار)میونسپل کارپوریشن کے اجلاس میں بھی پانامہ کیس کے نعروں کی گونج ، ایوان میں تحریک انصاف کے ممبران گو نواز گو اور مسلم لیگی چیئرمین رد عمران رد کے نعرے لگاتے رہے اپوزیشن کے بھرپور احتجاج کے دوران تما آئیٹمز منظور(بقیہ نمبر30صفحہ12پر )

(بقیہ نمبر1صفحہ12پر )کرلیے گئے۔پانامہ کے ہنگامہ پر کنوینئر نے اجلاس ملتوی کردیا۔اجلاس کے شروع پر چیئرمین صدیق انصاری کی اہلیہ کی وفات پر فاتحہ خوانی کی گئی۔جلیل خان بابر نے کہا کہ پہلے اجلاسوں میں جو قرار دادپاس ہوئی ہیں ان کا جواب دیں پھر کارروائی شروع کریں۔راؤ مظہر الاسلام نے کہا کہ سابقہ اجلاس کی کارروائی لکھی ہوئی ایوان کے سامنے پیش کی جائے اور اس کی منظوری لی جائے۔ضرار خان نے کہا کہ ایجنڈا نامکمل ہے ترقیاتی منصوبوں کی تفصیل نہ لکھی گئی ہے۔جس کی وجہ سے ہم کارروائی چلنے نہیں دیں گے۔یہ ملتان کی عوام کے ساتھ زیادتی ہے۔گونگے،بہروں کی طرح اس کی منظوری نہیں دے سکتے۔کنوینئر سعید انصاری نے کہا کہ اس کو فی الحال ملتوی کردیتے ہیں۔اگلا آئٹم پیش کیاجائے۔عمران رشید سلہری نے کہا کہ میری یو سی23کا کمپیوٹر یوسی20کے چیئرمین عمران ارشد کے پاس ہے اسے واپس دلایا جائے۔ عوام کو پیدائشی واموات کی رجسٹریشن کرانے میں شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔کنوینئر نے کہا کہ آپ کا مسئلہ اے ڈی ایل جی لوکل گورنمنٹ کو بھیج دیں گے مسئلہ حل ہو جائے گا۔رانا سجاد نے کہا کہ ہمیں جن محکموں سے شکایات ہوتی ہے۔ان کے متعلقہ افسران کو ایوان میں بلایا جائے دوسرا یہ کہ بلڈنگ انسپکٹرز نقشہ میونسپل کارپوریشن میں جمع کرانے کی بجائے خود بلڈنگ سیل کرتے ہیں اور پھر پیسے لے کر ڈی سیل کردیتے ہیں ان کے خلاف کارروائی کی جائے۔انہوں نے کہا کہ دو پولیس سٹیشن میونسپل کارپوریشن کی عمارتوں میں قائم ہیں۔ان سے کرایہ وصول کیا جائے۔ملک اعجازرجوانہ نے کہا کہ سالڈ ویسٹ اور واسا کے درمیان بہتر رابطہ کار طے کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ بلڈنگزکے خلاف کارروائی چیئرمینوں کو اعتماد میں لے کر کی جائے۔مالکان کو نوٹس دیا جائے اگر ایف آئی آر درج کرانی ہوتو چیئرمین کوپہلے بتایا جائے۔لطیف میتلا نے میئر اور ڈپٹی میئر ز کو سالڈ ویسٹ مینجمنٹ کا چیئرمین اور بورڈ کے اراکین منتخب ہونے پر مبارکباد دی۔انہوں نے کہا کہ ایوان میئرکو اختیار دے کہ وہ میونسپل کارپوریشن کے نئے آفس کے لئے مختص3کروڑ روپے ترقیاتی فنڈز میں منتقل کرسکیں کیونکہ جون تک نئی بلڈنگ نہ بن سکتی ہے۔رانا نعیم ایڈووکیٹ نے کہا کہ میری یوسی میں تجاوزات کاخاتمہ کیا جائے۔نئی کالونیوں کو غیر آباد جگہ پر بنانا چاہیے۔آم کے باغات والی جگہ پر نہ بنائی جائیں۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ ہمیں اجلاس کے بعد مدرسوں والا کھانا نہ کھلایا جائے جس پر تمام ایوان نے ان کی بھرپور حمایت کی۔جس پر کنوینئر نے میئر سے کہا کہ آئندہ اچھا کھانا اور منرل واٹر مہیا کیے جائیں۔ظہور بھٹہ نے کہاکہ ملبے کو اٹھانے کا معاوضہ لیا جائے۔چیف آفیسر احمد وٹو نے کہا کہ میونسپل کارپوریشن کے رولز آف بزنس اور یونین کونسل کے رولز آف بزنس میں فرق ہے یہ ایوان حکومت پنجاب کے رولز تبدیل نہیں کرسکتی۔محمد قسور بھٹی نے کہا کہ شاہین پلازہ کے حوالے سے جوبھی کارروائی کی جائے۔اس میں مجھ سے مشاورت ضرور کی جائے۔کیونکہ یہ میرا حلقہ ہے۔امجد انصاری نے کہا کہ عملہ صفائی کو بڑھایاجائے۔شہباز نے کہا کہ ترقیاتی فنڈز میں تینی فیصد غیر مسلم کوٹہ رکھا جائے۔سردار اعجاز ڈوگرنے کہا کہ تین اجلاس ہوچکے ہیں مگر مائیک ٹھیک نہ ہوا ہے اسے ٹھیک کرایا جائے۔ضرارخان اور راؤ مظہرالاسلام کے احتجاج کے باوجود ایجنڈہ منظورکرلیا گیا۔ قربان فاطمہ نے پانامہ پر بات کرنا چاہی تو حکومتی اراکین نے ان کا گھیراؤ کرلیا اور رو عمران رو کے نعرے لگائے۔جس پر اپوزیشن اراکین نے بھی اپنی اپنی جگہوں پر سے اٹھ کر گونواز گو کے نعرے شروع کردیئے۔اس موقع پر ایوان مچھلی منڈی کا منظر پیش کرنے لگا۔اس ہنگامہ آرائی کو دیکھ کر کنوینئر نے اجلاس ملتوی کردیا۔ایوان میں واصف محمود بٹ نے شاہین مارکیٹ سے ملحقہ پلازہ تعمیر کرنے کے لئے حکومت پنجاب سے درخواست کی اور ایوان قرارداد پیش کی کہ پاک گیٹ لوہاری گیٹ اور دولت گیٹ دروازوں کو د وبارہ بحال کیا جائے۔ سرکلرروڈ کی پاک گیٹ سے لوہار گیٹ تک النگ کے ساتھ ساتھ توسیع کی جائے۔آئیٹم نمبر7دستی قراردادمیں گلگشت کالونی نزد سیکنڈری بورڈ آفس میں میونسپل کارپوریشن کی جگہ پر میئر ملتان کے لئے کیمپ آفس کی منظوری دی جائے13لاکھ روپے مختص کیے جائیں۔جلیل خان بابر نے قرارداد پیش کی کہ وویمن یونیورسٹی کو متی تل روڈ پر اس کی عمارت میں منتقل کیا جائے اور گورنمنٹ گرلز کچہری روڈ کالج کو فوری بحال کیاجائے۔بلڈنگ بائی لاز کی منظوری کیلئے بھی قرارداد پیش کی گئی۔راؤمظہرالاسلام نے قرارداد پیش کی کہ میرے حلقے میں پی ٹی سی ایل نے کھدائی کی جس کی پی ٹی سی ایل کے ذمے 31 لاکھ11ہزار7سو 36روپے ادائیگی بنتی ہے۔مگرمیونسپل آفیسرانفراسٹرکچرنے از خود ہی اس رقم کو 8 لاکھ 64ہزار9سو 60روپے کردیا ہے۔اس بارے میں وضاحت کی جائے کہ میونسپل آفیسر انفراسٹرکچرنے تقریباً23لاکھ کی رقم کم کیوں کی۔

مزید : ملتان صفحہ آخر