بجلی کی لوڈشیڈنگ بدترین مراحل میں داخل، عوام سراپا احتجاج، واپڈا حکام کو بددعائیں

بجلی کی لوڈشیڈنگ بدترین مراحل میں داخل، عوام سراپا احتجاج، واپڈا حکام کو ...

خانیوال،وہاڑی،لڈن، سکندرآباد،منڈی یزمان (نمائندگان)جنوبی پنجاب میں بجلی کی لوڈشیڈگ بد سے بدترین مراحل میں داخل ہوگئی ہے جس کے نتیجہ میں شہری سراپا احتجاج بن گئے ہیں اور واپڈا حکام کو بددعائیں دے رہے ہیں۔دوسری طرح لوڈشیڈنگ کیخلاف ڈسٹرکٹ بار خانیوال میں مکمل ہڑتال کی گئی۔خانیوال سے نمائندہ پاکستان کے مطابق گزشتہ رو ز ڈسٹرکٹ بار کے زیرِ اہتما م لو ڈ شیڈنگ کے خلاف بار میں مکمل ہڑتا ل کی گئی، کوئی وکیل کسی عدالت میں پیش نہیں ہوا ، اس موقع پر ڈسٹرکٹ بار کے صدر چوہدری عمر چیمہ ، جنرل سیکرٹری راجہ سہیل ظفر ، سابق صدور رانا محمد اسلم، رانا جعفر علی خاں ، راؤ جمیل ، چوہدری (بقیہ نمبر38صفحہ7پر )

غلام حسین، سابق جنرل سیکرٹریز ، اظہر عباس جکھڑ، راؤ خالد محمود ، اقبال جعفری ، سینئر وکلا ء چوہدری عبدالجبار ایاز ، ملک عطا ء الرحمن شہزاد ، افتخار شاہی ، چوہدری عبدالرؤ ف اور دیگر نے لوڈ شیڈنگ کی شدید مزمت کر تے ہوئے کہا ہے کہ لوڈ شیڈنگ سے عدالتی امور بھی متاثر ہو رہے ہیں انہو ں نے فی الفور لوڈ شیڈنگ ختم کر نے کا مطالبہ کیا ہے ۔ وہاڑی سے بیورو رپورٹ اور نامہ نگار کے مطابق بجلی کی طویل غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کی وجہ سے ہر طبقہ پریشان ، تاجروں کی مشکلات بڑھ گئی ، شدیدگرمی کی وجہ سے مکینوں اور مچھروں کی بہتا ب ، عوام ملیر یا بخار میں مبتلا ہونے لگے جس پر عوامی وسماجی حلقوں سا جد حسین، عامرعلی ، عبدالرحمن ، عمیر علی ، ارشاد علی ، محمد اکبر ، علی احمد، سردار محمد ، اشفا ق حسین ودیگر نے احتجاج کر تے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ بجلی کی طویل غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ فی الفور ختم کیا جا ئے تاکہ شہریوں کو ریلیف مل سکے ۔لڈن سے نمائندہ پاکستان کے مطابق جوں جوں گرمی کی شدت بڑھتی جا رہی ہے ویسے ویسے ہی بجلی کا دورانیہ بھی بڑھتا جا رہا ہے جس کی وجہ شہریوں کو بہت زیادہ پریشانی کا سامنا ہے جبکہ بجلی نہ ہونے کی وجہ سے لوگوں کے کاروبار اور معمولات زندگی تباہ ہو کر رہ گئے ہیں جس سے شہریوں میں شدید پریشانی کی لہر پائی جاتی ہے اس کے علاوہ بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کی وجہ سے آفس اور سکولوں کالجوں کو جانے والے ملازم طبقہ لوگ یا طلبہ و طالبات کو بہت زیادہ پریشانی کا سامنا ہے جس پر لڈن کے شہریوں نے شدید احتجاج کرتے ہوئے وزیر اعلی پنجاب سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔سکندر آباد سے نمائندہ پاکستان کے مطابق شجاع آباد اور گردونواح میں بجلی کی بدترین لوڈشیڈنگ جاری ہے ۔بجلی کی شہری علاقوں میں 20گھنٹے اور دیہی علاقوں میں 22گھنٹے لوڈ شیڈنگ کی جارہی ہے۔لوڈشیڈنگ کی وجہ سے مچھروں کو بھی کھل کر کھیلنے کا موقع مل رہا ہے ۔بجلی نہ ہونے سے کاروبار زندگی شدید متاثر ہے ۔لوڈشیڈنگ کی ستائی ہوئی عوام کوسوئی گیس کی بندش کے عذاب کا سامنا ہے۔حکمران محکمہ سوئی گیس کی مدد سے عوام کو گیس بھی صرف تبرک کے طور پر دے رہے ہیں ۔16گھنٹوں کی گیس بندش سے ناشتہ اور کھانا بنانا انتہائی مشکل ہو گیا ہے جس کی وجہ سے بچے بھوکے سکول جانے پر مجبور ہیں۔بھوکے اور منہ بسورتے بچوں کو دیکھ کر خواتین جھولیاں اٹھا کر حکومت وقت کوبد دعائیں دے رہی ہیں۔ ان حالات کے پیش نظر سکندرآباد کے نوجوانوں نے سوموار کو احتجاج کی کال دیدی۔احتجاج اور ہڑتال کے اعلانیہ پوسٹرگلیوں اور چوک میں آویزاں ہو چکے ہیں۔منڈی یزمان سے نامہ نگار کے مطابق واپڈا کی جا نب سے اعلا نیہ اور غیر اعلا نیہ لو ڈ شیڈنگ کا دورانیہ مزید بڑ ھا دیا گیا ہے ۔ شہر میں 18گھنٹے اور دیہا تو ں میں 20گھنٹو ں سے بھی زا ئد غا ئب رہنے کے بعد بھی بجلی اور عوام میں آ نکھ مچو لی کا سلسلہ جا ری رہتا ہے ۔جس کی وجہ سے با لخصوص ور کشا پس مالکان اور ورکرز کے گھرو ں میں فاقو ں کی نو بت آن پہنچی ہے ۔جبکہ وولٹیج کی کمی بیشی کے باعث الیکٹرونک اشیاء کے جل جانے کے اطلا عات ہیں۔ ادھر سورج بھی آپے سے باہر ہوتا جارہا ہے۔ جھلسا دینے والی گرمی نے شہر کی سڑکیں اور بازار ویران کر دئے ہیں۔ حبس اور گرمی سے برا حال ہو چکا ہے۔

لوڈشیڈنگ

مزید : ملتان صفحہ آخر