فاٹا اصلاحات بل کی پارلیمنٹ سے منظوری بڑی کامیابی ہے : الحاج شاہ جی گل

فاٹا اصلاحات بل کی پارلیمنٹ سے منظوری بڑی کامیابی ہے : الحاج شاہ جی گل

  

جمرود(نمائندہ خصوصی)فاٹا اصلاحات بل پارلیمنٹ سے منظوری ایک بڑی کامیابی ہے الحاج شاہ جی گل آفریدی ممبر قومی اسمبلی الحاج شاہ جی گل آفریدی نیکوکی خیل قبیلے کے ذیلی شاخ منیا خیل کے حمایتی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان و افغانستان میں امن دونوں ملکوں کے مفاد میں ہے اس لیے دونوں ملکوں کے درمیان امن و امان قائم کرنے کے لیے مزاکرات جلد شروع ہوں گے جن کے لیے پاکستان نے کمیٹی بنائی ہے جس کا میں بھی ممبر ہوں جو جلد افغانستان کا دورہ کریں گے۔انہوں نے کہا کہ قبائیلی علاقوں میں اصلاحات وقت کی ضرورت ہے جن کو پارلیمنٹ نے منظوری دی جس پر ہم تمام مکاتب فکر کے مشکور ہے۔انہوں نے کہا کہ جمرود بجلی گریڈ اسٹیشن کا افتتاح جلد کرکے بجلی کی ترسیل شروع ہوجائے گی۔انہوں نے کہا کہ علاقے میں رابطہ سڑکیں و رابطہ پلوں کی تعمیر، سولر ٹیوب ویلز کے میگا پراجیکٹ مکمل کیے جس سے علاقے کی پسماندگی دور کرنے میں مدد ملے گی۔انہوں نے کہا کہ قبائیلی علاقوں میں موجودہ نظام کی وجہ سے قبائیلی عوام کو بنیادی حقوق نہیں ملے رہے اس لیے اس نظام کا خاتمہ وقت کی ضرورت تھی جن کا خاتمہ کردیا۔فاٹا اصلاحات بل پارلیمنٹ سے منظوری کے بعد صدر پاکستان نے منظوری دے دی جس سے اب یہ بل باقاعدہ قانون بن گیا ہے جس سے قبائیلی عوام کو بنیادی انسانی حقوق مل جائے گے جبکہ قبائیلیوں کو اپیل وکیل اور دلیل کا حق حاصل ہوا۔انہوں نے کہا کہ جو حقوق زرداری، نواز،عمران کے بچوں کو حاصل ہے وہ حقوق و قبائیلی بچوں کا بھی حق ہے۔انہوں نے کہا کہ تیراہ راجگل کو این اے 44 میں شامل کرنے کے لیے عدالت میں رٹ دائر کردیا ہے جبکہ ریگی للمہ زمین کا مسئلہ کے حل میں پاکستان تحریک انصاف کے صوبائی حکومت اور وزیر اعلی پرویز خٹک رکاوٹ ہے جنہوں نے سخت شرائط بنائے تھے ریگی للمہ زمین کوکی خیل قبیلے کا حق ہے اس حق پر کسی کو ڈاکہ ڈالنے کی اجازت نہیں دے گے۔جلسہ عام سے حاجی احمد شاہ منیاخیل، حاجی رحیم منیاخیل، حاجی ملک جان منیاخیل،ملک نصیر احمد کوکی خیل، ملک سلیم،ملک اورنگزیب ملاگوری، ملک قابل شیر سکندرخیل،محمد اللہ، ملک عطاء اللہ محسود،ملک ندیم زخہ خیل،قاری سید عالم شینواری، الحاج کاروان کے ترجمان فضل اکبر آفریدی،محمد عرفان کوکی خیل، ملک حاجی عابد افریدی و دیگر نے بھی خطاب کیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -