نیشنل پیس اینڈ جسٹس کونسل نے اقوام متحدہ سے پرائیڈ آف پرفارمنس ایوارڈ حاصل کرلیا

نیشنل پیس اینڈ جسٹس کونسل نے اقوام متحدہ سے پرائیڈ آف پرفارمنس ایوارڈ حاصل ...
نیشنل پیس اینڈ جسٹس کونسل نے اقوام متحدہ سے پرائیڈ آف پرفارمنس ایوارڈ حاصل کرلیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

دبئی (طاہر منیر طاہر) گورنمنٹ آف پاکستان کے ادارہ نیشنل پیس اینڈ جسٹس کونسل کے چیئرمین میاں عبدالوحید نے دبئی کا دورہ کیا اور یہاں نیشنل پیس اینڈ جسٹس کونسل کے عہدیداران سے ملاقات کی۔
اس موقع پر میاں عبدالوحید نے کہا کہ آج کل پاکستان میں ہم آہنگی کی بے حد ضرورت ہے لوگوں میں اتحاد و اتفاق پیدا کرنے کے لئے ہر کسی کو اپنا فرض نبھانا چاہیے۔ اس سلسلہ میں آگاہی کے لئے نیشنل پیس اینڈ جسٹس کونسل ایک عرصہ سے کام کررہی ہے اور بین المذاہب و بین المسالک ہم آہنگی پر زور دے رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان آج بھی تشدد کی لہر اور دہشتگردی کے دور سے گزررہا ہے، اگر ہمیں اس سلسلہ کو روکنا ہے تو آپس میں ہم آہنگی اوربرداشت پیدا کرنا ہوگی۔ میاں عبدالوحید نے کہا کہ ہمارے ادارہ نے گزشتہ چند سالوں کے دوران جس طرح کام کیا ہے اس بات کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ اقوام متحدہ کا پرائیڈ آف پرفارمنس ایوارڈ جو بھارت جارہا تھا وہ کارکردگی کی بنیاد پر پاکستان نے اپنے نام کرلیا ہے۔جو بہت بڑی بات ہے۔


میاں عبدالوحید سے ملاقات کا اہتمام چودھری محمد الطاف وائس چیئرمین اور چودھری انیس الرحمن سینئر وائس پریذیڈنٹ نیشنل پیس اینڈ جسٹس کونسل نے کیا تھا جس میں چودھری راشد فاروق آرائیں، میاں جاوید چودھری، ذوالفقار علی آرائیں، عرفان رحمانی، سید سجاد حسین شاہ، صغیر چودھری، چودھری عبدالغفار اور ملک دوست محمد اعوان ودیگر لوگ بھی شامل تھے۔ اس موقع پر میاں عبدالوحید نے کہا کہ ملک بھر میں 100 سے زائد مساجد آپس میں لڑائی جھگڑوں اور غلط فہمیوں کی و جہ سے بند ہوگئیں تھیں ہم نے آپسی افہام و تفہیم کرواکر دوبارہ کھلوادی ہیں جبکہ آپسی بھائی چارہ اور امن کی فضا پید اکرنے کی ہر ممکن کوشش کی جارہی ہے۔


میاں عبدالوحید نے کہا کہ نیشنل پیس اینڈ جسٹس کونسل نہ صرف پاکستان میں بلکہ بیرون ملک بھی کام کررہی ہے اور اس کے متعددیونٹ اوورسیز کے ممالک میں بھی موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دنیا کا کوئی مذہب لڑائی جھگڑا اور فساد نہیں چاہتا جبکہ ہمارا مذہب اسلام تو ہے ہی امن او رسلامتی کا پیغام۔


لہٰذا اس پیغام کو ہمیں ہر جگہ پھیلانا چاہئے ہر پاکستانی کو خواہ وہ کہیں بھی موجو دہے اسے چاہیے کہ وہ اسلامی تعلیمات کو مدنظررکھتے ہوئے ہر جگہ ام کا پیغام پہنچائے اور خود بھی امن و سلامتی کا عملی نمونہ بن کر دکھائے۔ اگر ہر فرد اپنی اپنی اصلاح کرے تو نہ صرف پاکستان بلکہ پوری دنیا امن و سلامتی کا گہوارہ بن سکتی ہے۔

مزید :

عرب دنیا -