طلباء کی اے اور او لیول کے فزیکل امتحانات کے خلاف درخواست ، اسلام آباد ہائیکورٹ نے فیصلہ سنا دیا 

طلباء کی اے اور او لیول کے فزیکل امتحانات کے خلاف درخواست ، اسلام آباد ...
طلباء کی اے اور او لیول کے فزیکل امتحانات کے خلاف درخواست ، اسلام آباد ہائیکورٹ نے فیصلہ سنا دیا 

  

اسلام آباد(این این آئی)اسلام آباد ہائیکورٹ نے کورونا کی وجہ اے اور او لیول کے طلبا کی فزیکل امتحانات کے خلاف درخواست ناقابل سماعت قرار دیتے ہوئے مستردکردی۔اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کورونا کی وجہ اے اور او لیول کے طلبا کی فزیکل امتحانات کےخلاف درخواست پرسماعت کی، سماعت کےدوران چیف جسٹس اطہرمن اللہ نےکہاکہ کوئی ہدایت جاری نہیں کرسکتے، درخواست این سی او سی کو بھیج دیتے ہیں،عدالتوں کا کام نہیں کہ ملک کے پالیسی معاملات میں مداخلت کریں، آج تک کورونا متعلق جتنے معاملات آئےہم نےاین سی او سی پالیسی فیصلوں میں مداخلت نہیں کی،ویسےبھی حکومت پاکستان کیمرج کو کوئی ہدایت جاری نہیں کر سکتی،حکومت صرف ان امتحانات سے متعلق یہاں سہولت فراہم کرتی ہے۔

چیف جسٹس نےاستفسارکیاکہ کیا آپ چاہتےہیں حکومت ان کوامتحان لینےسےروک دے؟جس پردرخواست گزاروکیل نےکہاکہ میں درخواست میں کوئی ایسی چیز نہیں مانگ رہاجو کیمرج کی پالیسی نا ہو،میری درخواست کیمرج کےخلاف نہیں،کیمرج نےدو آپشن دئیے،سعودی عرب، تھائی لینڈ،انڈیا نےفزیکل کی بجائےآن لائن امتحان کےآپشن کواپنایاہے۔

چیف جسٹس نےکہاکہ آپ کی پٹیشن میں نو درخواست گزار  ہیں،ہوسکتاہےباقی ہزاروں فزیکل امتحان دیناچاہتے ہوں،نو پٹشنر ہزاروں طلبہ کے نمائندے تو نہیں ہو سکتے، کیا بچے امتحانات نہیں دینا چاہتے؟ کیسےبچےہیں جو امتحان نہیں دیناچاہتے،دلائل کےبعدعدالت نےفیصلہ محفوظ کرلیااوربعد ازاں جاری فیصلہ میں عدالت نےدرخواست کاناقابل سماعت قرار دیتےہوئےمستردکردیا۔

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -