تصویر کھچوانے کے شوق میں خاتون دہکتے آتش فشاں میں جاگری

تصویر کھچوانے کے شوق میں خاتون دہکتے آتش فشاں میں جاگری
تصویر کھچوانے کے شوق میں خاتون دہکتے آتش فشاں میں جاگری

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

جکارتہ (ویب ڈیسک) انڈونیشیا میں ایک خاتون سیاح تصویر کھچوانے کی کوشش میں دہکتے آتش فشاں میں جا گریں، حکام کے مطابق متاثرہ خاتون کی لاش کو نکالنے میں ریسکیو عملے کو دو گھنٹے لگے اور سیاح کی موت کو حادثہ قرار دے دیا گیا۔

خاتون کی شناخت 31 سالہ چینی شہری ہوانگ لیہونگ کے نام سے ہوئی ہے، جو اپنے شوہر کے ساتھ مشرقی جاوا کے آتش فشاں پارک ”ایجن“ کے گائیڈڈ ٹور پر تھیں۔انڈونیشیا کے مقامی میڈیا میں گردش کرنے والی ایک تصویر میں ہوانگ لیہونگ کو سانحے سے قبل سلفر گیس کے بادلوں کے ساتھ پوز دیتے ہوئے دیکھا جاسکتا ہے۔

آج نیوز کے مطابق یہ جوڑا طلوع آفتاب کو عکس بند کرنے کیلئے فعال آتش فشاں کی چوٹی پر چڑھ گیا تھا، جو اپنی مقبول ”نیلی آگ“ کیلئے جانا جاتا ہے۔جو سلفیورک گیسوں کے دہکنے کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے۔ٹور گائیڈ نے بعد میں حکام کو بتایا کہ ابتدائی طور پر بار بار خبردار کئے جانے کی وجہ سے خاتون نے تصویریں کھینچتے ہوئے گڑھے کے کنارے سے محفوظ فاصلہ برقرار رکھا تھا لیکن اس کے بعد وہ ایک انچ پیچھے ہوئیں اور غلطی سے اپنے لمبے لباس پر قدم رکھا، اور پھسل کر 250 فٹ لڑھکتے ہوئے آتش فشاں کے منہ میں جا گریں۔