دھرنوں سے پیدا صورتحال تشویشناک ہے ،مذاکرات کامیاب ہونے چاہئیں ۔غیرملکی میڈیا

دھرنوں سے پیدا صورتحال تشویشناک ہے ،مذاکرات کامیاب ہونے چاہئیں ۔غیرملکی ...

  

                            نیو یارک /واشنگٹن /نئی دہلی/لندن(آئی این پی)غیر ملکی میڈیا نے نواز شریف حکومت کے خاتمہ کیلئے وفاقی دارالحکومت میں جاری دھرنوں سے پیدا صورتحال کو تشویش ناک قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ افغانستان سے امریکی فوج کی واپسی کے سال پاکستان میں مستحکم جمہوری حکومت ہونی چاہیے،مظاہرین سے مذاکرات کامیاب ہونے چاہئیں،سول نافرمانی اور استعفوں کے اعلان کے بعد عمران بند گلی میں داخل ہوگئے ہیں ‘ اسلام آباد میں مختلف ممالک کے سفارت کاروں کو پاکستان کے استحکام بارے تشویش ہے ‘نواز حکومت کی اقتصادی بحالی کے پروگرام کو موجودہ صورتحال سے سخت نقصان پہنچ رہا ہے‘مظاہرین کی کسی ایک پارٹی سے حکومت کے معاملات طے پا گئے تو دوسری پارٹی کی پوزیشن کمزور ہو جائے گی۔ امریکی ‘ برطانوی ‘ بھارتی اور گلف کے میڈیا میں پاکستان کی صورتحال بارے مسلسل شائع ہونے والی تجزیاتی رپورٹس میں ساری صورتحال کے بارے میں پاکستان کی سیاست کو جاننے والے تجزیہ کاروں کی طرف سے اپنی آراءکا اظہار کیا جارہا ہے۔ گزشتہ روز امریکی نشریاتی ادارے سی بی ایس نیوز کے مطابق نواز حکومت کا خاتمہ مغرب کے لیے بھی چیلنج ہوگا۔ سینئر مغربی سفارت کار وں کے حوالے سے اپنی رپورٹ سی بی ایس نے کہا ہے کہ مظاہرین اور حکومت کے درمیان مذاکرات کامیاب ہونے چاہئیں،ایسے وقت میں جب رواں سال کے آخر میں افغانستان سے امریکی فوج واپس جا رہی ہے، انہیں مستحکم پاکستان کی ضرورت ہے اور اگر پاکستان میں منتخب جمہوری حکومت نہ رہی تو ایک تو پاکستان پر کسی قسم کی پابندیاں عائد نہیں کی جاسکیں گی اور نہ انہیں ایسا تعاون مل سکے گا جو منتخب جمہوری حکومت میں مل سکتا ہے۔سی بی ایس کے مطابق پاکستانی وزارت خارجہ کے ایک سینئر اہلکار کا کہنا ہے کہ امریکا اور دیگر مغربی ممالک نے نواز شریف ان کے مخالفین کو پیغامات بھیجے ہیں اور تنازع کو خوش اسلوبی سے حل کرنے پرزور دیا ہے۔بھارتی اخبار ٹائمز آف انڈیا لکھتا ہے کہ سول نافرمانی اور اسمبلیوں سے استعفے دینے کے اعلان کے بعد تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان بند گلی میں جا چکے ہیں ،ان کے پاس دھرنے اور وزیر اعظم کے استعفے کے مطالبے کے علاوہ کوئی دوسرا راستہ نہیں بچا۔ امریکی اخبار وال اسٹریٹ جرنل کہتا ہے کہ اسلام آباد میں مختلف ممالک کے سفارت کاروں کو پاکستان کے استحکام کے بارے میں تشویش ہے اور ان کے مطابق نواز حکو مت کی جانب سے اقتصادی بحالی کے پروگرام کو موجودہ صورتحال سے نقصان پہنچ رہا ہے۔ برطانوی نشریاتی ادرے بی بی سی کا کہنا ہے کہ مظاہرین کی کسی ایک پارٹی سے حکومت کے معاملات طے پا گئے تو دوسری پارٹی کی پوزیشن کمزور ہو جائے گی۔

غیر ملکی میڈیا

مزید :

صفحہ آخر -