وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ نے پولیس تفتیش میں مداخلت کی تو سخت ایکشن لیا جائےگا،لاہور ہائیکورٹ

وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ نے پولیس تفتیش میں مداخلت کی تو سخت ایکشن لیا ...

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی ) لاہور ہائیکورٹ نے وزیر اعلیٰ انسپکشن ٹیم کی طرف سے اقدام قتل کیس میں پولیس افسر کی طلبی کا حکم معطل کرتے ہوئے قرار دیا ہے کہ اگر آئندہ وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ نے پولیس کی تفتیش میں مداخلت کی تو سخت ایکشن لیا جائے گا۔لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر مظاہر علی اکبر نقوی نے مقصودہ بی بی کی درخواست پر سماعت شروع کی تو بیوہ کے وکیل عدالت کو بتایا کہ پولیس سٹیشن بھکھی شیخوپورہ نے اسکی درخواست پر امجد سلیم کے خلاف اقدام قتل کا مقدمہ درج کر رکھا ہے جس کی تفتیش جاری ہے مگر وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ میں موجود انسپکشن ٹیم کے رکن نے اس کیس میں متعلقہ تفتیشی کو طلب کیا ہے جو پولیس رولز کی خلاف ورزی ہے، انہوں نے بتایا کہ وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ پولیس کی تفتیش پر اثر انداز ہو رہے جس کی وجہ سے بیوہ کو انصاف نہیں مل رہا، درخواست گزار نے استدعا کی کہ ہائیکورٹ وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ کی پولیس تفتیش میں مداخلت کا نوٹس لے، ابتدائی سماعت کے بعد عدالت نے اقدام قتل کیس میں پولیس افسر کی طلبی کا نوٹیفکیشن معطل کرتے ہوئے قرار دیا کہ آئندہ وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ کی طرف سے کسی کیس کے دوران پولیس تفتیش میں مداخلت کی گئی تو متعلقہ حکام کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے گا۔

 لاہور ہائیکورٹ

مزید :

صفحہ آخر -