وہ جگہیں جہاں انگلی ڈالنا خطر ناک ثابت ہو سکتا ہے

وہ جگہیں جہاں انگلی ڈالنا خطر ناک ثابت ہو سکتا ہے
وہ جگہیں جہاں انگلی ڈالنا خطر ناک ثابت ہو سکتا ہے
کیپشن: fingure

  

نیویارک ( نیوزڈیسک) بے دھیانی میں غلط جگہوں پر انگلی دینے پر کافی تکلیف ہوتی ہے۔ اسی طرح بعض اوقات بے دھیانی میں ہم سے کچھ ایسی چھوٹی چھوٹی غلطیاں ہو جاتی ہیں، جو نظر انداز کر دی جاتی ہیں، لیکن بعدازاں ان کی وجہ سے بڑا نقصان ہوجاتا ہے۔ مثال کے طور پر کسی چیز کو بے دھیانی میں چھونے سے انگلی پر زخم آ جاتا ہے، جو بعدازاں پیچیدہ انفیکشن کا ذریعہ بن جاتا ہے۔ تو لہذا ہم یہاں آپ کو ان پانچ مقامات کے بارے میں بتائیں گے، جنہیں چھونے سے پہلے آپ کو مکمل احتیاط برتنی چاہیے۔

گیس پمپ کا ہینڈل: 2011ءمیں ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق گیس پمپ کے 71فیصد تک ہینڈل آلودگی یا جراثیم سے آلودہ ہوتے ہیں، جس کے مطلب ہے کہ ان کو چھونے سے آپ انفیکشن کا شکار ہو سکتے ہیں۔ حالاں کہ ہم جانتے ہیں کہ اسے چھوئے بغیر کام نہیں چل سکتا لیکن اسے چھونے سے قبل ٹشو پیپر کا استعمال کریں اور بعدازاں اچھی طرح اپنے ہاتھوں کی دھلائی کو یقینی بنائیں۔

ناک: نزلہ، زکام کی صورت میں ناک کو چھونے میں احتیاط برتیں، کیوں کہ آپ کی انگلیاں انفیکشن کے پھیلاﺅ کا باعث بن سکتی ہیں۔

آنکھیں: نیند یا تھکاوٹ میں آنکھوں کو ملنا عمومی عادت ہے، لیکن نزلہ، زکام کی صورت میں آنکھیں ملنے سے بہت آسانی سے انگلیوں کے ذریعے جسم میں پھیل سکتا ہے۔

ہوٹل کے کمرے کا ریموٹ کنٹرول: ہوٹل میں کمرہ لینے کے بعد عمومی طور پر ہم ٹی وی یا اے سی چلانے کے لئے ریموٹ کنٹرول کا بے دھڑک استعمال کرتے ہیں، حالاں کہ ایک تحقیق کے مطابق ہوٹل کے 81فیصد ریموٹ کنٹرول مختلف جراثیم اور بیکٹیریا سے بھرپور ہوتے ہیں، جنہیں انگلیوں سے چھونے کے بعد جسم پر لگانے سے بیماریاں پیدا ہو سکتی ہیں۔

آفس سینک(ہاتھ دھونے والی جگہ): ایک تحقیق کے مطابق دفاتر میں موجود 75 فیصد سینک مختلف جراثیم سے آلودہ ہوتے ہیں، جہاں سے مختلف بیکٹیریا انگلیوں کے ذریعے جسم میں منتقل ہو سکتے ہیں۔

مزید :

تعلیم و صحت -