برآمدات اضافے کیلئے توانائی کی قیمت کم کی جائے ، سابق گورنر سٹیٹ بینک

برآمدات اضافے کیلئے توانائی کی قیمت کم کی جائے ، سابق گورنر سٹیٹ بینک

 اسلام آباد (اے پی پی) سٹیٹ بینک آف پاکستان کے سابق گورنرڈاکٹر عشرت حسین نے کہا ہے کہ برآمدات ملکی معیشت کو مستحکم رکھنے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں جس میں اضافہ کرنے کیلئے کوششوں کے علاوہ برآمدی شعبہ کے مسائل کو حل کرنے کی ضرورت ہے ، پاکستانی برآمدات کم ہو رہی ہیں جس کی وجوہات میں توانائی کی قیمت اور مسلسل فراہمی،ہنر مند افرادی قوت کی کمی اور برامدی شعبہ کی جانب سے کارکنوں کی تربیت میں عدم دلچسپی شامل ہیں۔ یہ بات انھوں نے ایف پی سی سی آئی کے زیراہمتام ’’ برامدات میں مسابقت‘‘ کے موضوع پر منعقدہ ایک سیمیناز سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر پروفیسر سروش حسنات وائس چانسلر این ای ڈی یونیورسٹی، پروفیسر جاوید اشرف وائس چانسلر قائد اعظم یونیورسٹی اسلام آباد، سابق وفاقی وزیر سینیٹر جاوید جبار، پروفیسر سکندر مہدی، ایف پی سی سی آئی کے عہدیداروں اور کاروباری برادری کے نمائندے بھی موجود تھے۔ڈاکٹر عشرت حسین نے کہا کہ ملک میں توانائی کی قیمت زیادہ ہے جس کی وجہ سے پیداواری لاگت بڑھ جاتی ہے اور ہماری مصنوعات بین الاقوامی منڈی میں پسپائی پر مجبور ہو جاتی ہیں۔ دیگر مقررین نے کہا کہ امن و امان کی صورتحال کی وجہ سے بھی پیداواری لاگت میں اضافہ ہوا ہے ۔ جہاں پاکستان کی برآمدت مسلسل گر رہی ہیں وہیں خطے کے بعض ممالک کی برامدات دگنی ہو گئی ہیں۔ دیگر ممالک اپنے برامدی شعبہ کو ترغیبات دے رہے ہیں ۔فیڈریشن آف پا کستا ن چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈ سٹر ی کے صدرزبیر طفیل نے کہا کہ برامدت کے زوال کے اسباب میں توانائی کی قیمت ایک اہم ایشو ہے اسلئے ہماری مسابقت کی صلاحیت کم ہو رہی ہے۔ سری لنکا اور انڈونیشیاء اور دیگر حریف ممالک میں بھی توانائی سستی ہے اور اسی وجہ سے جہاں ہماری برامدات میں کمی آئی ہے وہیں ۔ انھوں نے مطالبہ کیا کہ گیس کی قیمت میں فوراً کمی کی جائے جبکہ برآمدی شعبہ کیلئے بجلی کی قیمت میں فوری طور پر کمی کی جائے تاکہ برامدی شعبہ اپنے پیروں پر کھڑا ہو سکے ۔

مزید : کامرس