معروف صحافی، کالم نگار اور ماہر تعلیم ادیب جاودانی انتقال کرگئے

معروف صحافی، کالم نگار اور ماہر تعلیم ادیب جاودانی انتقال کرگئے

لاہور (ایجوکیشن رپورٹر) معروف صحافی، کالم نگار اور ماہر تعلیم ادیب جاودانی مختصر علالت کے بعد گزشتہ روز وفات پاگئے انا للہ و انا الیہ راجعون۔ ان کی عمر 68 سال کے قریب تھی، وہ کچھ عرصے سے عارضہ قلب میں مبتلا تھے۔ ادیب جاودانی مرحوم نے 70ء کی دہائی میں فیصل آباد سے بطور نامہ نگار صحافت کا آغاز کیا، بعدازاں لاہور آگئے۔ یہاں انہوں نے ماہنامہ ’’مون‘‘ ڈائجسٹ اور ہفت روزہ ’’مون ٹائمز‘‘ کا آغاز کیا جبکہ نسبت روڈ پر مون لائٹ سکول بھی قائم کیا جس کی بعدازاں لاہور اور مختلف شہروں میں درجنوں برانچیں قائم ہوگئیں۔ وہ روزنامہ ’’نوائے وقت‘‘ کے مستقل کالم نگار تھے اور عام طور پر تعلیمی و سماجی مسائل پر کالم لکھتے تھے جبکہ انہوں نے پرائیویٹ سکولز، مالکان کی تنظیم بھی قائم کی تھی۔ آل پاکستان پرائیویٹ سکولز مینجمنٹ ایسوسی ایشن کے چیئرمین کی حیثیت سے انہوں نے سکولوں کے مسائل حل کرنے کے لئے طویل جدوجہد کی۔ مون ڈائجسٹ کے مرحوم مدیر اعلیٰ ادیب جاودانی کو گزشتہ روز مقامی قبرستان میں سپرد خاک کر دیا گیا۔ مرحوم کی نماز جنازہ نظریہ پاکستان ٹرسٹ کے مادر ملت پارک میں ادا کی گئی جس میں ڈاکٹر عتیق احمد ،روزنامہ جرات کے چیف ایڈیٹر جمیل اطہر ، وائس چیئرمین نظریہ پاکستان ٹرسٹ ڈاکٹر رفیق احمد، سیکرٹری جنرل شاہد رشید، روز نامہ سٹی 42کے گروپ ایڈیٹر نوید احمد چوہدری،آل پاکستان پرائیویٹ سکول فیڈریشن کے صدر کاشف مرزا، سابق ایم ایل اے آزاد کشمیر مولانا محمد شفیع جوش، چوہدری محمد رمضان ،شاہد نور ، لیبر لیڈر خورشید احمد ، ،رانا طاہر سلیم سمیت مختلف شعبہ زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد نے بڑی تعداد میں شرکت کی ۔نماز جنازہ میں شریک معروف شخصیات نے مرحوم کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ وہ نجی شعبے میں تعلیمی خدمات کے حوالے سے ممتاز اور نامور شخصیت تھے اور پرائیویٹ سکول مینجمنٹ ایسوسی ایشن کے کئی برسوں سے صدر تھے ۔ مرحوم کی رسم قل آج(بدھ کو)تین بجے سہ پہر نظریہ پاکستان ٹرسٹ مال روڈمیں ادا کی جائے گی۔

ادیب جاودانی انتقال

مزید : صفحہ آخر