فراڈ انٹری ٹیسٹ لاہور کی اکیڈمی مافیا کو نوازنے کا حربہ ہے‘ سرائیکی رہنما

فراڈ انٹری ٹیسٹ لاہور کی اکیڈمی مافیا کو نوازنے کا حربہ ہے‘ سرائیکی رہنما

  

ملتان (جنرل رپورٹر)سرائیکی رہنماؤں پروفیسر شوکت مغل ،ملک اللہ نواز وینس ،ظہور دھریجہ ،عاشق بزدار ،سید مہدی الحسن اور عابدہ بخاری نے میڈیکل انٹری ٹیسٹ میں سرائیکی وسیب کے امیدواروں سے بدترین دھاندلی کرنے پر تخت لاہور کے حکمرانوں کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے(بقیہ نمبر21صفحہ12پر )

۔انہوں نے کہا کہ انٹری ٹیسٹ بذات خود ایک فراڈ اور دھوکہ ہے اور اس لئے بھی غیر آئینی اور غیر قانونی ہے کہ انٹری ٹیسٹ کا مقصد گورنمنٹ کے اپنے ہی امتحانی سسٹم پر عدم اعتماد ہے ۔انہوں نے کہا کہ فراڈ انٹری ٹیسٹ لاہور کی اکیڈمی مافیا کو نوازنے اور لاہور کے ان شاطر لوگوں کو نوازنے کا حربہ ہے جو پیپر سیٹر ہیں ۔انہوں نے کہا کہ کئی سالوں سے میڈیکل انٹری ٹیسٹ کے پیپر کو لاکھوں روپے رشوت لیکر لاہور کی اکیڈمیوں کو دکھا دیا جاتا ہے ، افسوس معلوم ہونے کے باوجود حکومت ایکشن لیتی ہے اور نہ ہی عدالتیں از خود نوٹس لیتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ اسی طرح ایم فل اور پی ایچ ڈی سرائیکی میں داخلے کیلئے این ٹی ایس کا ٹیسٹ لازمی ہے ، یہ بھی ایک فراڈ ہے کہ ٹیسٹ سرائیکی میں داخلے کا ٹیسٹ انگلش زبان میں لیا جاتا ہے۔ ظہور دھریجہ نے کہا کہ سرائیکی وسیب کے نوجوانوں میں صلاحیتوں کو کمی نہیں لیکن ان کی صلاحیتوں کو قتل کیا جارہا ہے،میڈیکل انٹری ٹیسٹ میں ناکام ہونیوالے سرائیکی وسیب کے امیدواروں کی اب حالت یہ ہے کہ وہ دیواروں سے ٹکریں ماررہے ہیں بہت سے نوجوان نفسیاتی مسائل کا شکار ہورہے ہیں،نوجوانوں نے اتنی محنت کی کہ ان کا کھانا پینا چھوٹ گیا وہ کمزور اور نحیف ہوگئے اور بہت سے نوجوانوں کو دو سے تین نمبر کی عینکیں لگ گئیں لیکن تخت لاہور کے ظالم مسلسل ظلم کرتے آرہے ہیں۔کوئی مرے یا جئے ان کو کسی کی کوئی پرواہ نہیں ۔سرائیکی رہنماؤں نے وفاقی وزیر مواصلات حافظ عبدالکریم کے نجی کالج کی طرف سے 12 سو سے زائد طلبہ کو مبینہ طور پر جعلی ڈگریاں دینے اور احتجاج کرنے پر طلبہ پر تشدد کرنے کی بھی مذمت کی ۔ انہوں نے گرفتار ہونے والے طلباء کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -