خیبر ایجنسی ،لنڈی کوتل کے رہائشی مال مویشی پر پابندی سے قربانی سے محروم ہونے کا خدشہ

خیبر ایجنسی ،لنڈی کوتل کے رہائشی مال مویشی پر پابندی سے قربانی سے محروم ہونے ...

  

خیبر ایجنسی (بیورورپورٹ)پشاور اور افغانستان سے مال مویشی لنڈیکوتل لانے پر پابندی سے لوگ سنت ابراہیمی سے محروم ہونے کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے لنڈیکوتل ریلوئے اسٹیشن مال مویشی منڈی خالی پڑی ہیں عیدالضحی میں دس دن باقی رہ گئے ہیں لیکن تا حال لنڈیکوتل مویشی منڈی چھوٹے بڑے مویشیوں سے خالی پڑی ہیں لنڈیکوتل کے زیادہ تر عوام دنبے کی قربانی دیکرسنت ابراہیمی ادا کرتے ہیں ذرائع کے مطابق کہ گز شتہ رو ز پاک افغان بارڈر طورخم پر پاکستانی حکام نے افغانستان سے مویشی لانے کی اجازات نہیں دی بلکہ صرف محدود تعداد میں اجازت دی تھی تاکہ صرف لنڈیکوتل کے عوام کی ضرورت پو ری ہو سکے لیکن اب افغانستان حکام نے مویشی پاکستان لے جانے پر مکمل پابندی لگا دی اور بیوپاریوں کو صاف بتا دیا ہے کہ محدود تعداد میں مویشی پاکستان نہیں جائیں گے جبکہ خیبر پختونخوا کے مختلف حصوں سے لنڈیکوتل مویشی لانے پر پشاور میں پولیس مختلف جہگوں رنگ روڈ حیات آباد اور کارخانوں مارکیٹ پھاٹک پر مویشیوں لانے پر باری بھتہ وصو ل کرتے ہیں بلکہ نہ دینے کی صورت میں مویشی واپس کر دیتے ہیں اور خیبر ایجنسی میں داخل نہیں ہو نے دیتے اس سلسلے میں تنطیم اہلسنت والجماعت کے سینئر رہنماء شاکر آفریدی نے پریس کلب میں میڈیا کو بتا یا کہ لنڈیکوتل پر دونوں اطراف سے مال مویشی لانے پر پابندی ظلم کی انتہا ہیں اگر پابندی فوری طور پر ختم نہیں کی گئی تو لنڈیکوتل کے عوام سنت ابراہیمی کی اجر وثواب سے محروم ہو جائینگے انہوں نے کہا کہ لنڈیکوتل میں مال مویشی بہت کم لوگ پالتے ہیں اور عید الضحی ،عید لفطر اور عید میلادالنبی کے موقع پر لوگ خیبر پختونخوااور زیادہ تر افغانستان کے مویشیوں پر قربانی اور خیرات کرتے ہیں انہوں نے دھمکی دی کہ دو دنوں کے اندر مسئلہ حل نہیں کیا گیا تو وہ شدید احتجا ج کر نے پر مجبور ہو جائینگے جسکی تمام تر ذمہ داری انتظامیہ پر عائد ہو گی

مزید :

پشاورصفحہ آخر -