آزادکشمیر کی خواتین کو سرجی کے شعبہ میں آنا ہوگا،ڈاکٹر فرزانہ صابر

آزادکشمیر کی خواتین کو سرجی کے شعبہ میں آنا ہوگا،ڈاکٹر فرزانہ صابر

مظفرآباد(بیورورپورٹ)آزادکشمیر کی پہلی خاتون کلاسیفائڈ جنرل سرجن ڈاکٹر فرزانہ صابر نے کہاہے کہ آزادکشمیرمیں خواتین کو درپیش مسائل کے حل کیلئے جنرل سرجری کے شعبہ میں موثراقدامات کی ضرورت ہے۔ خواتین کو سرجی کے شعبہ میں آنا ہوگا تاکہ خواتین کی علاج معالجہ کے حوالہ سے بڑھتی ہوئی ضروریات اور مشکلات کو کم کیاجاسکے۔ پورے آزادکشمیرمیں صرف(2)دو خواتین سرجن ہیں 35لاکھ کی آبادی کیلئے نہ ہونے کے برابر ہیں۔خواتین سرجن نہ ہونے کے باعث ہزاروں خواتین مریض مردسرجنز سے آپریشن نہ کروانے کے باعث پیچیدہ امراض کا شکارہوکر زندگی کی بازی ہارجاتی ہیں،جنرل سرجری میں خواتین سرجنز کے آنے سے خواتین کے مسائل جلد حل ہوسکتے ہیں ۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے میڈیاسے خصوصی گفتگوکرتے ہوئے کیا۔ سرجن ڈاکٹر فرزانہ صابرنے بتایاکہ ہسپتالوں میں راوانہ بڑی تعدادمیں مریض آتے ہیں ۔ ان کاکہناتھاکہ ہفتہ وار اوپی ڈی میں ان کے پاس ایک سو سے زائد مریض چیک اپ کے لئے آتے ہیں ۔ ان میں سے کئی خواتین مریض ایسی بھی ہوتی ہیں جو بیس بیس سال سے صرف اس وجہ سے علاج نہیں کرواسکی ہیں کہ انہیں خاتون سرجن نہیں مل سکی تھی ‘ جو کہ ایک بڑا المیہ ہے۔ انہوں نے کہاکہ جنرل سرجری میں پتے کا آپریشن، اپینڈیکس، گلہڑ،چھاتی کا کینسر،آنتوں کا کینسر اوربواسیرسمیت دیگر امراض شامل ہیں ‘ان مریضوں کا اگرعلاج کی بروقت سہولیات مل جائیں تو کافی حدتک ان امراج پر قابوپایاجاسکتاہے۔ انہوں نے کہاکہ خواتین مردڈاکٹرزکو اپنے مسائل بیان کرنے سے کتراتی ہیں جس سے درست تشخیص نہ ہونے کے باعث خواتین کے مسائل اور امراض میں مذیداضافہ ہوجاتاہے۔انہوں نے کہاکہ خواتین سرجنز کے آنے سے خواتین کو بہت آسانی ہورہی ہے اور خواتین کے مسائل اور مشکلات میں بتدریج کمی آرہی ہے۔ان کاکہناتھاکہ لیپرو سکوپی آسان اور کم اخراجات سے آپریشن کا ایک بڑازریعہ ہے ، لیکن یہ شعبہ کام نہیں کررہاہے جس سے مسائل میں مزید اضافہ ہوگیاہے۔ اگر حکومت اس شعبہ کی طرف مناسب توجہ دے تو مریضوں کو مزید آسانی سے علاج معالجہ کی سہولیات میسرآئیں گی۔ڈاکٹرفرزانہ صابر نے چھاتی کے کینسرکی علامات کا ذکر کرتے ہوئے بتایاکہ عموماً بریسٹ کینسر کی علامات چالیس سال سے زائد عمر کی خواتین میں ظاہرہوناشروع ہوتی ہیں‘اس میں عام طورپر چھاتی میں زیادہ ابھار، گلٹیاں وغیرہ ظاہرہوتی ہیں۔انہوں نے تجویزکیاکہ خواتین کو خود بھی اپنا چیک اپ کرتے رہنا چاہئے اور ماہانہ بنیادوں پرمتعلقہ فزیشن سرجن سے چیک اپ کرواناچاہئے۔ انہوں نے کہاکہ اگر کسی خاتون کو چھاتی کا کینسرہوتو اس کے خاندان کی تمام خواتین کو اپنا چیک اپ کروانا چاہئے کیوں کہ خاندان کی دیگر خواتین میں بھی یہ مرض پایاجاسکتاہے اور اسی طرح مریض کی اولاد ‘بیٹی کو بھی یہ مرض ممکنہ طورپر لاحق ہونے کا زیادہ امکان ہے۔ڈاکٹرفرزانہ صابر نے کہاکہ آزادکشمیرمیں ایمرجنسی سروسزکے آغازسے لوگوں کو بہت فائدہ مل رہاہے تاہم اس میں مذیداقدامات کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہاکہ حادثاتی کیسز کو مکمل طورپر مفت علاج کی سہولیات میسر کی جانی چاہئیں۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر