اسلامی سکالر کا خواتین کے میک اپ کے بارے میں فتویٰ، جواب میں مسلمان اداکارہ نے اپنے جسم کے ایسے حصے کی تصویر لگا دی کہ انٹرنیٹ پر طوفان آ گیا، جان سے مارنے کی دھمکی دے دی گئی کیونکہ۔۔۔

اسلامی سکالر کا خواتین کے میک اپ کے بارے میں فتویٰ، جواب میں مسلمان اداکارہ ...
اسلامی سکالر کا خواتین کے میک اپ کے بارے میں فتویٰ، جواب میں مسلمان اداکارہ نے اپنے جسم کے ایسے حصے کی تصویر لگا دی کہ انٹرنیٹ پر طوفان آ گیا، جان سے مارنے کی دھمکی دے دی گئی کیونکہ۔۔۔

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) گزشتہ دنوں ایک آسٹریلوی خاتون مسلم سکالر نے خواتین کے میک اپ کے بارے میں فتویٰ جاری کیا تھا جس کے جواب میں مسلمان برطانوی اداکارہ نے ایسی تصویر پوسٹ کر دی ہے کہ انٹرنیٹ پر طوفان برپا ہو گیا ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق آسٹریلوی سکالر امِ جمال الدین نے فتویٰ دیا تھا کہ ’خواتین کا اپنی پلکوں کو اکھاڑنا گناہ ہے۔“ اس کے جواب میں پاکستانی نژاد برطانوی اداکارہ سائرہ خان اپنے انسٹاگرام پر ایک تصویر پوسٹ کر دی ہے جس میں وہ ساحل سمندر پر اوندھی لیٹی ہے اور اس نے ’بکنی‘ پہن رکھی ہے۔ سائرہ خان نے اپنی تصویر کے ساتھ لکھا ہے کہ ”آج میں نے خبر پڑھی کہ ایک مسلم مبلغ نے مسلمان خواتین کے پلکیں بنانے کے خلاف فتویٰ دیا ہے۔یہ تصویر میری طرف سے اس فتوے کا جواب ہے۔“ اپنی تحریر کے اختتام میں سائرہ خان نے امِ جمال الدین کو قدامت پرستی کا طعنہ دیتے ہوئے قبل از تاریخ کا ڈائنوسار قرار دیا ہے اور اپنے جسم کے شرمناک حصے کو بوسہ دینے کو کہا ہے۔

وہ فلم جس میں ریپ کا سین عکسبند کرنے کیلئے اداکارہ کو واقعی ’ریپ‘ کردیا گیا

سائرہ خان کی تصویر آن کی آن میں انٹرنیٹ پر پھیل گئی اور مسلمانوں کی طرف سے اسے شدید تنقید کا نشانہ بنایا جانے لگا۔ بعض نے اسے جان سے مارنے کی دھمکیاں بھی دیں۔ ایک صارف نے لکھا ہے کہ ”بکواس بند کرو، تم مسلمان ہو، نہ کسی بھی طرح سے اسلام کی نمائندگی کرتی ہو۔ اسی کام کے بدلے میں تمہیں تمہارے گورے آقاﺅں سے بہت کچھ مل رہا ہے۔ اگر تمہیں اپنی زندگی عزیز ہے تو اسلام میں دخل اندازی سے گریز کرو۔“رپورٹ کے مطابق سائرہ خان نے اس صارف کے دھمکی آمیز کمنٹ کا سکرین شاٹ لے کر ٹوئٹر کے ذریعے برطانوی پولیس کو بھیجا اور لکھا کہ ”یہ دیکھو، اس شخص نے مجھے قتل کی دھمکی دی ہے۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -