یوں تو پہلے بھی ہوئے اُس سے کئی بار جدا

یوں تو پہلے بھی ہوئے اُس سے کئی بار جدا
یوں تو پہلے بھی ہوئے اُس سے کئی بار جدا

  

یوں تو پہلے بھی ہوئے اُس سے کئی بار جدا

لیکن اب کے نظر آتے ہیں کچھ آثار جدا

گر غمِ سود و زیاں ہے تو ٹھہر جا اے جاں

کہ اسی موڑ پہ یاروں سے ہوئے یار جدا

دو گھڑی اس سے رہو دُور تو یوں لگتا ہے

جس طرح سایۂ دیوار سے دیوار جدا

یہ جدائی کی گھڑی ہے کہ جھڑی ساون کی

میں جدا گریہ کناں، ابر جدا ،یار جدا

کج کلاہوں سے کہے کون کہ اے بے خبرو

طوقِ گردن سے نہیں طرۂ دستار جدا

کوئے جاناں میں بھی خاصا تھا طرح دار فرازؔ

لیکن اس شخص کی سج دھج تھی سرِ دار جدا

شاعر:احمد فراز

                  Yun To Pehlay Bhi Huay Uss Say Kai Baar Juda

                   Lekin Ab K Nazar Aatay Hen Kuch Asaar Juda

  Gar Gham  e  Sood  o  Ziaan Hay To Thehr Ja Ay Jaan

                          Keh Usi Morr Pe Yaaron Say Huay Yaar Juda

             Do Gharri Uss Say Raho Door To Yun Lagta Hay

                                Jiss Trah Saaya  e  Dewaar Say Dewaar Juda

             Yeh Judaai Ki Gharri Hay Keh JHarri Saawan Ki

                     Main JUda Giya Kunaan, Abr Juda, Yaar Juda

                Kajkallhon Say Kahay Kon Keh Ay Bekhabaro

           Taoq  e  Gardan SAy anahen Turra  e  Dastaar Juda

  Koo  e  JanaMen Bhi Khaasa Tha Trahdaar FARAZ

    Lekin Uss Shakhs Ki Saj Dhaj Thi Sar  e  Daar Juda

Poet: Ahmad Faraz        

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -