کہا تھا کس نے کہ عہدِ وفا کرو اُس سے​

کہا تھا کس نے کہ عہدِ وفا کرو اُس سے​
کہا تھا کس نے کہ عہدِ وفا کرو اُس سے​

  

کہا تھا کس نے کہ عہدِ وفا کرو اُس سے​

جو یوں کِیا ہے تو پھر کیوں گلہ کرو اُس سے​

نصیب پھر کوئی تقریبِ قرب ہو کہ نہ ہو​

جو دل میں ہوں، وہی باتیں کہا کرو اُس سے​

​یہ اہلِ بزم تنک حوصلہ سہی پھر بھی​

ذرا فسانۂ دل ابتدا کرو اُس سے​

یہ کیا کہ تم ہی غمِ ہجر کے فسانے کہو​

کبھی تو اُس کے بہانے سنا کرو اُس سے​

فرازؔ ترکِ تعلق تو خیر کیا ہو گا!​

یہی بہت ہے کہ کم کم ملا کرو اُس سے

شاعر: احمد فراز

Kaha tha Kiss Nay Keh Ehd  e  Wafa Kro Uss Say

Jo Yun Kia Hay To Phir KiuN Gila Kro Uss Say

Naseeb Phir Koi Taqreeb  e  Qurb Ho Keh Na Ho

Jo Dil Men Hon Wahi Baaten Kaha Kro Uss Say

Yeh Ehl  e  Bazm Tunak Hosla Sahi Phir Bhi

Zra Fasaana  e  Dil Ibtida Kro Uss Say

Yeh Kia Keh Tum Hi Gham  e  Hijr K Fasaanay Kaho

Kabhi To Uss K Bahaanay Suna Kro Uss Say

FARAZ Tark  e  Talluq To Khair Kia Ho Ga

Yahi BAhut hay Keh KAm Kam Mila Kro Uss Say

Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -