کھلی آنکھوں میں سپنا جھانکتا ہے

کھلی آنکھوں میں سپنا جھانکتا ہے
کھلی آنکھوں میں سپنا جھانکتا ہے

  

کھلی آنکھوں میں سپنا جھانکتا ہے

کھلی آنکھوں میں سپنا جھانکتا ہے

وہ سویا ہے کہ کچھ کچھ جاگتا ہے

تری چاہت کے بھیگے جنگلوں میں

مرا تن، مور بن کر ناچتا ہے

مجھے ہر کیفیت میں کیوں نہ سمجھے

وہ میرے سب حوالے جانتا ہے

میں اس کی دسترس میں ہوں ، مگر

وہ مجھے میری رضا سے مانگتا ہے

کسی کے دھیان میں ڈوبا ہوا دل

بہانے سے مجھے بھی ٹالتا ہے

سڑک کو چھوڑ کر چلنا پڑے گا

کہ میرے گھر کا کچّا راستہ ہے

شاعرہ: پروین شاکر

Khuli Ankhon Men Sapna Jagta Hay

Wo Soya Hay Keh Kuch Kuch Jagta Hay

Teri Chahat K Bhigay Jangalon Menn

Mera Tan Mor Ban Kar Nachata Hay

  Mujhe Har Kaifiyat Menn Kiun Na Samjhay

Wo Meray Sab Hawalay Janta Hay

Kisi K Dhyan Men Dooba Hua Dil

Bahanay Say Mujhay Bhi Taalta Hay

Sarak Ko Chorr Kar Chalna Parray Ga

Keh Meray Ghar Ka Kacha Raasta Hay

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -