رقص میں رات ہے بدن کی طرح

رقص میں رات ہے بدن کی طرح
رقص میں رات ہے بدن کی طرح

  

رقص میں رات ہے بدن کی طرح

بارشوں کی ہوا میں بن کی طرح

چاند بھی میری کروٹوں کا گواہ

میرے بستر کی ہر شکن کی طرح

چاک ہے دامن قبائےِ بہار

میرے خوابوں کے پیرہن کی طرح

زندگی، تجھ سے دور رہ کر، میں

کاٹ لوں گی جلا وطن کی طرح

مجھ کو تسلیم، میرے چاند کہ میں

تیرے ہمراہ ہوں گہن کی طرح

بار ہا تیرا انتظار کیا

اپنے خوابوں میں اک دلہن کی طرح

شاعرہ: پروین شاکر

                          Raqs  Men Raat Hay Badan Ki Tarah

                    Baarshon Ki Hawa Men Ban Ki Tarah

            Chaand Bhi Meri Karwaton Ka Gawaah

                       Meray Bistar Ki Har Shikan Ki Tarah

                Chaak Hay Daaman  e  Qabaa  e  Bahaar

                            Meray Khaabon K Pairhan Ki Tarah

      Zindagi, Tujh Say Door  Na Reh Kar Main

                                      Kaat Lun Gi Jila Watann Ki Tarah

Mujh Ko Tasleen Meray Chaand Keh Main

                         Teray Hamraah Hun Gahan Ki Tarah

                                                                          Baarha Tera Intzaar Kia

       Apnay Khaabon Men Ik Dulhan Ki Tarah

Poet: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -