قریۂ  جاں میں کوئی پُھول کِھلانے آئے

قریۂ  جاں میں کوئی پُھول کِھلانے آئے
قریۂ  جاں میں کوئی پُھول کِھلانے آئے

  

قریۂ  جاں میں کوئی پُھول کِھلانے آئے

وہ مرے دِل پہ نیا زخم لگانے آئے

میرے ویران دریچوں میں بھی خوشبو جاگے

وہ مرے گھر کے دَر و بام سجانے آئے

اُس سے اِک بار تو رُوٹھوں میں اُسی کی مانند

اور مری طرح سے وہ مُجھ کو منانے آئے

اِسی کوچے میں کئی اُس کے شناسا بھی تو ہیں

وہ کسی اور سے ملنے کے بہانے آئے

اب نہ پُوچھوں گی میں کھوئے ہوئے خوابوں کا پتہ

وہ اگر آئے تو کُچھ بھی نہ بتانے آئے

ضبط کی شہر پناہوں کی،مرے مالک!خیر

غم کاسیلاب اگر مجھ کو بہانے آئے

شاعرہ: پروین شاکر

                                 Qaryaa   e  Jaan  Mein Koi Phool Khilaane Aaey 

                               Woh Meray Dil Pe Naya Zakhm LagaanayAaey

             Meray Veeraan Darichon Mein Bhi Khushbu Jaagay

                                 Woh Meray Ghar k  Dar  o  Baam Sajaanay Aaey 

                Uss Say Ik Baar To Roothun  Main Usai Ki Maanind

                          Aor Meri Trah Say Wo Mujh Ko Manaanay Aaey

                     Isi koohay Mein Ka i Us Kay Shanaasa Bhi To Hen

                                  Woh Kisi Aor Say Milnay Kay Bahaanay Aaey

Ab Na Poochhun Gi Main Khoay Huay Khabon Ka Pata

                             Woh Agar Aaey  To Kuch Bhi Na Bataanay Aaey

                        Zabt Ki Shehar Panaahon Ki Meray Maalik Khair

                            Gham Ka Sailaab Agar Mujh Ko BahaanayAaey

Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -