عکس خوشبو ہوں، بکھرنے سے نہ روکے کوئی

عکس خوشبو ہوں، بکھرنے سے نہ روکے کوئی
عکس خوشبو ہوں، بکھرنے سے نہ روکے کوئی

  

عکس خوشبو ہوں، بکھرنے سے نہ روکے کوئی

اور بکھر جاؤں تو مجھ کو نہ سمیٹے کوئی

کانپ اُٹھتی ہوں یہی سوچ کہ تنہائی میں

میرے چہرے پہ تیرا نام نہ پڑھ لے کوئی

جس طرح خواب میرے ہو گئے ریزہ ریزہ

اس طرح سے نہ کبھی ٹوٹ کے بکھرے کوئی

میں تو اس دن سے ہراساں ہوں کہ جب حکم ملے

خشک پھولوں کو کتابوں میں نہ رکھے کوئی

اب تو اس راہ سے وہ شخص گزرتا بھی نہیں

اب کس اُمید پہ دروازے سے جھانکے کوئی

کوئی آہٹ، کوئی آواز، کوئی چاپ نہیں

دِل کی گلیاں بڑی سنسان ہیں آئے کوئی

شاعرہ: پروین شاکر

      Aks   e  Khushboo Hun, Bikharnay Sau Na Rokey Koi

                                Aor Bikhar Jaun To  Mujh ko Na Samaitay Koi

               Kaanp Uthti Hun Main Yeh Soch K  Tanhaaee Me n

                          Meray  Chehray Pe Tera Naam Na Parrh L ay Koi

                                         Jis Tarah Khaab Meray Ho gaey Raiza Raiza

                                                 Is Tarah Se Na Kabhi Toot Ke Bikhray Koi

Mein To Is Din Say Hirasaan Hun Keh Jab Hukm Miley

              Khushk Phoolon Ko Kitaabon Men Na Rakhey Koi

                       Ab To Uss Raah Se Wo Shaks Guzarta Bhi Nahen

                            Ab Kis Umeed Pe Darwaazay SayJhaankay Koi 

                                              Koi Aahat, Koi Aawaaz, Koi Chaap Nahen

                                       Dil Ki Galiaan Bari Sunsaan Hain, Aaey Koi

                                                                                                                Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -