دروازہ جو کھولا تو نظر آئے کھڑے وہ

دروازہ جو کھولا تو نظر آئے کھڑے وہ
دروازہ جو کھولا تو نظر آئے کھڑے وہ

  

دروازہ جو کھولا تو نظر آئے کھڑے وہ

حیرت ہے مجھے ، آج کدھر بھُول پڑے وہ

بھُولا نہیں دل ، ہجر کے لمحات کڑے وہ

راتیں تو بڑی تھیں ہی، مگر دن بھی بڑے وہ

کیوں جان پہ بن آئی ہے ، بِگڑا ہے اگر وہ

اُس کی تو یہ عادت کہ ہواؤں سے لڑے وہ

الفاظ تھے اُس کے کہ بہاروں کے پیامات

خوشبو سی برسنے لگی، یوں پھُول جھڑے وہ

ہر شخص مجھے ، تجھ سے جُدا کرنے کا خواہاں

سُن پائے اگر ایک تو دس جا کے جڑے وہ

بچے کی طرح چاند کو چھونے کی تمنا

دِل کو کوئی شہ دے دے تو کیا کیا نہ اڑے وہ

طوفاں ہے تو کیا غم، مجھے آواز تو دیجے

کیا بھول گئے آپ مرے کچے گھڑے وہ

شاعرہ : پروین شاکر

                           Darwaza Jo Khola To Nazar Aaey  Kharray Woh

                       Hairat Hai Mujhay Aaj Kidhar Bhool ParrayWoh

                           Bhoolaa Nahi Dil Hijr Kay Lamhaat karray Woh

              Raate n to BaRi Then Hi Magar Din Bhi Barray Woh

                                 Kiun Jan Pe Ban Aai HayBigrra Hay Agar Woh

                            Us Ki To Yeh Aadat K Hawaaon Say Larray Woh

                          Alfaaz Thay Us Kay Keh Bahaaron K Payaamaat

               Khushbu Si Barasnay Lagi Y un Phool Jharray   Woh

Har Shakhs Mujhay Tujh Say  Juda Karnay  Ka Khahaan

                                             Sun Paaey Agar Aik To Das Ja K Jarray Woh

      Bachchay  Ki Tarah Chaand Ko Choonay Ki Tamanna

          Dil Ko Koi Shaey Day Day To Kia Kia Na Array Woh

       Toofaan Hayi To Kya Gham MujhayAwaaz To Dejiay 

       Kya  Bhool Gaey Aap Meray Kachchay Gharray Woh

                                                                                                                   Poetess: Parveen Shakir

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -