بنوں کے تینوں تدریسی ہسپتالوں میں سہولیات کا فقدان

  بنوں کے تینوں تدریسی ہسپتالوں میں سہولیات کا فقدان

  

بنوں (نمائندہ پاکستان) بنوں پی ٹی آئی نے تینوں تدریسی ہسپتالوں میں سہولیات کے فقدان اور خراب صورتحال و مبینہ کرپشن پر بی او جی کی چیئرمین آسیہ جہانگیر کے خلاف احتجاج کی دھمکی دیدی ہسپتالوں میڈیکل کالج میں غیر قانونی بھرتیوں کا حساب لینے تک پرامن احتجاج اور پشاور میں وزیر اعلیٰ ہاؤس اور صوبائی وزیر صحت دفتر کے باہر دھرنے کا اعلان کردیا چیئر پرسن ایم ٹی آئی بنوں کو ایک سازش کے تحت ہسپتالوں کا نظام حوالے کیا گیا جوکہ یہاں کے لاکھوں عوام کے ساتھ ناانصافی ہے ا ن خیالات کا اظہارپی ٹی آئی کے مرکزی جائنٹ سیکرٹری شریف زمان انصاف یوتھ ونگ کے صدر نذیر زمان خان نے ہنگامی احتجاجی اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ ایک نااہل خاتو ن جس کا صحت کے شعبے سے دور کا واسطہ بھی نہیں اور ایک بیوٹی پالر چلارہی ہے کو بنوں کے ہسپتالوں کا نظام حوالے کردیا گیا جنہوں نے آتے ہی کرپشن اور لوٹ مار کا سلسلہ شروع کردیا یہاں کے کلاس فور بھرتیوں میں غیر مقامی افراد کو لگاکر بنوں کے حق پر ڈاکہ ڈالا گیا ہسپتالوں میں سامان کی خریداری میں کتنے لئے گئے وہ ایک الگ کہانی ہے نرسز اور ڈاکٹروں کے تبادلوں پر بھی رشوت لی جاتی ہے حتی کے واٹساپ گروپوں میں ایم ٹی آئی بنوں کے کرپشن کی کہنانیاں عام ہوئی ہے جس سے تحریک انصاف کی بدنامی ہورہی ہے کلاس فور سے لیکر کمپوٹر اپریٹر تک کی بھرتیوں میں پیسے لئے گئے ہیں جوکہ ریکارڈ پر موجود ہے انہوں نے کہا کہ آئے روز کسی نہ کسی ہسپتال میں غفلت کے باعث اموت ہورہی ہے اب ہمارا پاس بی او جی کو ختم کرنے اور پرامن احتجاجی دھرنے کے سوا کوئی دوسرا راستہ نہیں بچا کیونکہ عمران خان نے ہمیں ظلم کے خلاف کھڑا ہونے کا سبق دیا ہے جوکہ غلط کام کریگا ہم اس کے خلاف اُٹھ کھڑے ہونگے انہوں نے کہا کہ ایم ٹی آئی چیئر پرسن او ر موجودہ بورڈ ممبران قوم کے سامنے وضاحت کریں کہ بنوں کے ہسپتالوں میں غیر مقامی افراد کو کیو بھرتی کیا اور بنوں کے حقوق پر کیو ڈاکہ ڈالا گیا جس پر ہمیں اور مشران کو تحفظات برقرار ہے انہوں نے کہا کہ ہسپتالوں میں ایم ٹی آئی کی غیر قانونی اقدامات اور بے جاہ مداخلت کے باعث مسائل میں روز بروز اضافہ ہورہا ہے لیکن مفت میں بدنامی تحریک انصاف کی ہوتی ہے لہذا موجودہ ممبران اور چیئر پرسن کو فوری طور پر فارغ کیا جائے اب تک بنوں ے تینوں ہسپتالوں میں ہونے والی لوٹ گھسوٹ کا نوٹس لیکر صاف وشفاف انکوائری کی جائے بصورت دیگر وزیر اعلیٰ ہاؤس اور صوبائی وزیر صحت کے دفتر کے باہر پرامن احتجاجی دھرنے دینگے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -