بھارتی شہری نے افغان مہاجرین لینے سے متعلق غیر مناسب بات کی تو امریکی خاتون سکالر میدان میں آ گئیں، ایسا جواب دیدیا کہ اس نے کبھی خوابوں میں بھی نہ سوچا تھا

بھارتی شہری نے افغان مہاجرین لینے سے متعلق غیر مناسب بات کی تو امریکی خاتون ...
بھارتی شہری نے افغان مہاجرین لینے سے متعلق غیر مناسب بات کی تو امریکی خاتون سکالر میدان میں آ گئیں، ایسا جواب دیدیا کہ اس نے کبھی خوابوں میں بھی نہ سوچا تھا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن )افغانستان کی بدلتی ہوئی صورتحال خطے پر بھی اثرات مرتب کر رہی ہے اور سوشل میڈیا پر اس معاملے پر صارفین کے درمیان بات چیت دیکھنے کو آتی ہے ۔چند دن قبل جب طالبان نے کابل کا کنٹرول سنبھالا تو حامد کرزئی ایئر پورٹ پر ہزاروں کی تعداد میں شہری ملک سے نکلنے کیلئے پہنچ گئے جس کے باعث فضائی آپریشن بھی معطل کرنا پڑ گیا ۔

امریکہ جنگ میں مدد کرنے والے افغان شہریوں کو پناہ دینے کا اعلان کر چکا ہے اسی طرح برطانیہ نے بھی بیس ہزار افغانیوں کو لے جانے کا اعلان کر رکھا ہے ۔ اس معاملے پر ٹویٹر صارف ” جوہان الویریس “نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ” ہمیں ہندوﺅں اور مسلمانوں کے درمیان امتیاز کیئے بغیر مزید کچھ مہاجرین کو قبول کرنا چاہیے، کم از کم چاہے کم وقت کیلئے ہی سہی۔“

ٹویٹر صارف کی اس بات پر کرسٹین فیئر نامی صارف ، جنہوں نے ٹویٹر پر اپنا تعارف ” جنوبی ایشیائی پولیٹیکل ملٹری افیئرز‘ کے سکالر کے طور پر کروایا ہے اور وہ امریکی یونیورسٹی میں پروفیسر بھی ہیں ، نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ جمہوریتیں کبھی بھی جہاجرین میں مذہب کی بنیاد پر تفریق نہیں کرتیں کیونکہ یہ جمہوری نہیں ہے۔ یہ نفرت ہے ۔ اور کچھ نہیں ۔میرا ملک ان ممالک سے جہاجرین کو لینے سے متعلق ہولناک رہا ہے جنہیں ہم نے براہ راست یا بالواسطہ تباہ کیا ہے،تاریخ ہم پر بے رحم ہو۔“

کرسٹین فیئر کی اس بات پر ایک بھارتی شہری ” پانیوال تھیاگو“ نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ ” امریکہ، روس اور پاکستان کو افغانستان کے تمام مہاجرین کو لینے دینا چاہیے۔ یہ چالیس سال سے ملک کو تباہ کر رہے ہیں، بھارت نے انہیں مہاجرین نہیں بنایا اور ہمیں ان کی ضرورت بھی نہیں ہے۔“

کرسٹین فیئر نے جب بھارتی شہری کے ٹویٹ کو پڑھا تو انہیں کافی ناگوار گزرا ہو گا جس پر انہوں نے جواب دینے کا فیصلہ کیا اورٹویٹر پر جاری پیغام میں کہا کہ ” امریکہ کو کبھی بھارتی تارکین کی ضرورت نہیں تھی، آپ لوگوں کے پاس ایٹم بم ہے لیکن آپ کے شہری غیر محفوظ ہیں ، انہیں غذائی قلت اور حفظان صحت کی شدید کمی کا سامنا ہے، پھر بھی ہم بھارتیوں کو خوش آمدید کہتے ہیں جو بڑھتے ہوئے نسلی اور مذہبی اقلیتیوں کو فروغ دیتے ہیں، تم ایک کوڑا دان ہو۔

مزید :

بین الاقوامی -