نجی شعبے کی کرپشن کو تحفظ دینے کیلئے ایمنسٹی سکیم متعا رف کرا نے کااعلان

نجی شعبے کی کرپشن کو تحفظ دینے کیلئے ایمنسٹی سکیم متعا رف کرا نے کااعلان

  

اسلام آباد(آن لائن)وفاقی حکومت نے نجی شعبے کی کرپشن وٹیکس چوری کو تحفظ دینے کیلئے ایمنسٹی سکیم متعا رف کرا نے کا اعلا ن کیا ہے ،یہ سکیم حکومت اور تاجروں کے درمیان طے پانے والے پیکیج کا حصہ ہے جس کا اعلان 31دسمبر تک متوقع ہے ، ایمنسٹی سکیم پر نئے سال میں یکم جنوری سے عملدرآمد کیے جانے کا امکان ہے ۔ذرائع کے مطابق ملک کے ارب پتی لوگوں کے پاس 200ارب روپے سے زائد کا کالا دھن ہے جو کبھی بینکوں میں جمع نہیں ہوا اور یہ بااثر گروہ کبھی کبھی اس کالے دھن کو رئیل اسٹیٹ میں ڈال کر اس کی قیمتوں کو مصنوعی طریقے سے اوپر لے جاتے ہیں اور کبھی سونے اور کبھی کھاد و چینی و گندم کی ذخیرہ اندوزی میں یہ پیسہ استعمال کرکے یہ امیر لوگ امیر سے امیر تر ہورہے ہیں جبکہ دوسری جانب سے یکم جولائی2015ء سے ملک کے بینکوں و مالیاتی اداروں میں ہونیوالی تمام ٹرانزیکشن پر 0.6 فیصد ود ہولڈنگ ٹیکس پر تاجر برادری اور ارب پتی لوگوں نے دوکھرب روپے سے زائد پیسہ بینکوں سے نکلوا لیا ہے ، حکومت نے نجی شعبے میں کالے دھن کو سفید کرنے کے لئے رائج 2.5 فیصد کمیشن کے بجائے اب ملک بھر کے کالے دھن رکھنے والے افراد اور تاجروں کو صرف ایک فیصد ٹیکس ادا کرکے ا پنا سرمایہ قانونی پیسے میں تبدیل کرنے کا ایک موقع دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

س اقدام سے حکومت کو نمایاں آمدن ہونے کی توقع ہے جس سے ایک طرف 3100ارب روپے کا سالانہ ٹیکس ہدف پورا کرنے میں مدد ملے گی بلکہ مزید منی بجٹ لانے کی ضرورت بھی نہیں رہے گا ، اس طرح جب کالا دھن سفید ہو جائے گا تو ملک میں پائی جانیوالی بلیک اکانومی کا حجم بھی کم ہو گا اور زیادہ سے زیادہ لوگ خود بخود ٹیکس نیٹ میں آنے کو ترجیح دیں گے۔

مزید :

کامرس -