شوکت خانم میں عمران خان کے والد کو بھی پروسیجر مکمل کرنا پڑاتھا: سی ای او

شوکت خانم میں عمران خان کے والد کو بھی پروسیجر مکمل کرنا پڑاتھا: سی ای او
شوکت خانم میں عمران خان کے والد کو بھی پروسیجر مکمل کرنا پڑاتھا: سی ای او

  

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) عمران خان کی کاوشوں سے بننے والے شوکت خانم ہسپتال میں ہر کسی سے مساوی سلوک کی خبریں سننے کو ملتی ہیں لیکن پہلی مرتبہ ہسپتال سے وابستہ غیرسیاسی کسی اعلیٰ عہدیدار نے اس ضمن میں کھل کر بات کی اور انکشاف ہواکہ عمران خان کے والد سے بھی دیگر مریضوں کی طرح برتاﺅ کیاگیا۔

نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگوکرتے ہوئے شوکت خانم میموریل ہسپتال کے سی ای او نے مختلف لوگوں کی توقعات اور اناﺅں کا اعتراف کرتے ہوئے بتایاکہ عمران خان کا فون یا پرچی کبھی آئی نہیں ،ا گر بھولی بھٹکی کوئی پرچی آبھی جائے تو اس پر کبھی غور ہی نہیں کیاگیا، خود عمران خان کے والد صاحب بھی پانچ چھ ہفتوں کیلئے شوکت خانم ہسپتال میں داخل رہے ، لوگوں نے دیکھاکہ دیگر مریضوں کے ساتھ وہ بھی بیٹھے ہوتے تھے ، ہسپتال کیلئے اس کے تمام مریض قابل قدر اور معزز ہیں ، کوئی چھوٹا بڑا نہیں اور وثوق سے کہہ سکتے ہیں کہ 100فیصدمیرٹ برقراررکھاہواہے ۔

مزید :

لاہور -