سزائے موت پانے والے ملزم کی اپیل پرپھانسی پرعملدرآمدروک دی گئی

سزائے موت پانے والے ملزم کی اپیل پرپھانسی پرعملدرآمدروک دی گئی

  

پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ کے چیف جسٹس مظہر عالم میانخیل اورجسٹس محمد ایوب خان پرمشتمل دورکنی بنچ نے ملٹری کورٹ سے سزائے موت پانے والے ملزم کی اپیل پرپھانسی پرعملدرآمد روکتے ہوئے وفاق سے ریکارڈ مانگ لیاہے فاضل بنچ نے یہ احکامات گذشتہ روز درخواست گذار امان اللہ کی جانب سے دائررٹ پرجاری کئے اس موقع پر عدالت کو بتایاگیاکہ درخواست گذار کے بھائی نورمحمد کو ملٹری کورٹ نے پھانسی کی سزادی ہے جسے سکیورٹی فورسز نے 2009ء میں ڈیرہ اسماعیل خان سے حراست میں لیا اور 2013-14کے دوران اسے بلیک قرار دیاگیااور16دسمبر کو میڈیا کے ذریعے پتہ چلاکہ اسے ملٹری کورٹ نے سزائے موت سنائی ہے جبکہ صرف یہ بتایاگیاہے کہ سکیورٹی فورسزپرحملے کے جرم میں اسے سزائے موت دی گئی ہے اورکالعدم تنظیم کارکن ہے تاہم نہ ہی ریکارڈ دیا جارہا ہے اورنہ ہی صفائی کاموقع دیاگیاہے اب لکی مروت انٹرنمنٹ سینٹرمیں موجود ہے لہذاسزائے موت کالعدم قراردی جائے فاضل بنچ نے ملٹری کورٹ کے احکامات معطل کرتے ہوئے وفاق کونوٹس جاری کرکے دس جنوری تک ریکارڈ مانگ لیاہے ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -