افغان باشندوں کو پاکستانی شناختی کارڈ جاری کرنے والے نادرا افسروں کے خلاف کارروائی کالعدم

افغان باشندوں کو پاکستانی شناختی کارڈ جاری کرنے والے نادرا افسروں کے خلاف ...

  

پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ کے جسٹس یحیی آفریدی اور جسٹس روح الامین پرمشتمل دورکنی بنچ نے افغان باشندوں کو پاکستانی شناختی کارڈ جاری کرنے والے نادرا افسروں کے خلاف کارروائی کالعدم قراردینے کے لئے دائر رٹ پرڈائریکٹرایف آئی اے اورڈی جی ری ویری فکیشن کونوٹس جاری کرکے جواب مانگ لیاہے فاضل بنچ نے یہ احکامات گذشتہ روز آل ایمپلائزنادراخیبرپختونخوا کی جانب سے فرقان یوسفزئی ایڈوکیٹ کی وساطت سے دائررٹ پرجاری کئے اس موقع پرعدالت کو بتایاگیاکہ درخواست گذار گریڈ 16اور17میں تعینات ہیں اورغیرملکیوں کو پاکستانی کمپیوٹرائزڈشناختی کارڈ جاری کرنے پرنادراملازمین کے خلاف ایف آئی اے نے جو مقدمات درج کئے ہیں وہ غیرقانونی ہیں کیونکہ جو شناختی کارڈ جاری کئے گئے ہیں وہ مطلوبہ ایس او پیز کے مطابق ہیں اورنادراکے اپنے احکامات ہیں کہ ان ایس او پیزپرعمل کرناہے اوراگرعملدرآمد نہ کیاگیاتو ان کے خلاف محکمانہ کاروائی ہوگی جوکارڈز جاری کئے گئے ہیں ان کیلئے مطلوبہ ضابطے پورے گئے تھے جبکہ دوسری جانب درخواست گذاروں کو نادراایکٹ کے دفعہ 40کے تحت استثنیٰ حاصل ہیں اوران کے خلاف ضابطہ فوجداری کے تحت کاروائی نہیں ہوسکتی لہذانادرا ملازمین کے خلاف جومقدمات درج ہیں انہیں منسوخ کیاجائے اورکاروائی کالعدم قرار دی جائے فاضل بنچ نے ابتدائی دلائل کے بعد ڈائریکٹرایف آئی اے اورڈی جی ری ویری فکیشن کونوٹس جاری کرکے جواب مانگ لیا۔

Back

مزید :

پشاورصفحہ آخر -