روسی صدر پیوٹن نے ایک ایسا ایٹمی ہتھیار تیار کرنے کا اعلان کردیا کہ امریکہ سمیت پوری مغربی دنیا کے ہوش اُڑادئیے، ایسی کیا خاصیت ہے؟ جان کر آپ بھی دنگ رہ جائیں گے

روسی صدر پیوٹن نے ایک ایسا ایٹمی ہتھیار تیار کرنے کا اعلان کردیا کہ امریکہ ...
روسی صدر پیوٹن نے ایک ایسا ایٹمی ہتھیار تیار کرنے کا اعلان کردیا کہ امریکہ سمیت پوری مغربی دنیا کے ہوش اُڑادئیے، ایسی کیا خاصیت ہے؟ جان کر آپ بھی دنگ رہ جائیں گے

  

ماسکو(مانیٹرنگ ڈیسک)امریکہ اوردیگر مغربی ممالک کے ساتھ انتہائی کشیدہ تعلقات کے ساتھ ہی روس نے اپنے ایٹمی و روایتی ہتھیاروں کو مزید جدت بخشنے کے مشن کا آغاز کر دیا ہے۔ روسی صدر ولادی میر پیوٹن نے اپنے متعلقہ اپنے فوجی سربراہوں اور سائنسدانوں سے مطالبہ کر دیا ہے کہ روس کے ایٹمی ہتھیار اتنے جدید ہونے چاہئیں کہ وہ دنیا کے کسی بھی میزائل ڈیفنس سسٹم میں پیوست ہونے کی صلاحیت رکھتے ہوں۔ علاوہ ازیں روس کے فوجی سربراہوں نے ’ڈرون ٹینک‘ کا کامیاب تجربہ بھی کر لیا ہے اور روس کی طرف سے سیٹلائٹس کو نشانہ بنانے کی صلاحیت کے حامل ہتھیاروں کی تیاری کی خبریں بھی سامنے آ رہی ہیں۔میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق ماسکو میں فوجی سربراہوں سے خطاب کرتے ہوئے ولادی میر پیوٹن کا کہنا تھا کہ ”روس کی فوج نے شام میں اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا ہے۔ ہمیں عالمی طاقت کے توازن میں کسی بھی تبدیلی سے نمٹنے کے لیے تیار رہنا ہو گا۔ اس وقت ہم کسی بھی جارح ملک سے زیادہ طاقتور ہیں۔“

شام کی چند سال قبل کی اور موجودہ تصاویر ,ایسے ہولناک مناظر کہ آپ کا دل بھی مسلمان ملک کے لئے خون کے آنسو روئے گا

رپورٹ کے مطابق ولادی میر پیوٹن کی طرف سے یہ بیانات اس روز سامنے آئے جس روز انہیں دوسری بارامن کے نوبل انعام کے لیے نامزد کیا گیا۔ پہلی بار 2014ءمیں انہیں اس ایوارڈ کے لیے نامزد کیا گیا تھا تاہم اس وقت ایوارڈ انہیں نہ مل سکا۔ رپورٹ کے مطابق روس کے تیار کردہ 2ڈرون ٹینکوں کی ویڈیو منظرعام پر آئی ہے۔ اس ویڈیو میں ان بغیر انسان کے چلنے والے ٹینکوں کا ماسکو کے باہر تجربہ کیا جا رہا ہوتا ہے۔

دوسری طرف روس کی طرف سے سیٹلائٹس شکن ہتھیار بنانے کی رپورٹ سامنے آنے پر امریکی حکام کی نیندیں حرام ہو چکی ہیں۔رپورٹ کے مطابق اس بار نوبل پرائز کے لیے ولادی میر پیوٹن کا نام ارضی سیاست اور عالمی حکومتی پالیسیوں پر نظر رکھنے والے فرانسیسی تھنک ٹینک ”فرنچ سنٹر فار پولیٹیکل اینڈ انٹرنیشنل ریلیشنز“ کے سربراہ فیبین باﺅسرٹ کی طرف سے پیش کیا گیا ہے۔ فیبین باﺅسرٹ کا کہنا ہے کہ ”میں سمجھتا ہوں کہ ولادی میر پیوٹن اس وقت دنیا کے وہ واحد لیڈر ہیں جو حقیقی معنوں میں داعش اور اس جیسی دیگر شدت پسند تنظیموں کے خاتمے کے لیے مخلصانہ کوششیں کر رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ میں نے ان کا نام امن کے نوبل انعام کے لیے پیش کیا ہے۔“واضح رہے کہ اس سے قبل نوبل انعام کے لیے پیوٹن کا نام روسی ایڈووکیسی گروپ ”دی انٹرنیشنل اکیڈمی آف سپرچوئل یونٹی اینڈ کوآپریشن آف پیپلز آف دی ورلڈ“ کی طرف سے پیش کیا گیا تھا۔

مزید :

بین الاقوامی -