پنجاب یونیورسٹی کے 4پروفیسروں کی برطرفی کی درخواست سماعت کے لئے منظور ،نوٹس جاری

پنجاب یونیورسٹی کے 4پروفیسروں کی برطرفی کی درخواست سماعت کے لئے منظور ،نوٹس ...
پنجاب یونیورسٹی کے 4پروفیسروں کی برطرفی کی درخواست سماعت کے لئے منظور ،نوٹس جاری

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے جعلی ریسرچ پیپرز کی بنیاد پر پنجاب یونیورسٹی کے 4 پروفیسرز کو عہدوں سے ہٹانے کی درخواست باقاعدہ سماعت کے لئے منظور کرتے ہوئے یونیورسٹی انتظامیہ اور چاروں پروفیسرز سے 9 فروری تک جواب طلب کر لیا ہے۔

جسٹس جواد حسن نے چودھری شعیب سلیم ایڈووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ پنجاب یونیورسٹی کے ایجوکیشن اینڈ ریسرچ ڈیپارٹمنٹ کے پروفسیر ڈاکٹر سعید شاہد، ڈاکٹر عابد حسین، ڈاکٹر رفاقت علی اور ڈاکٹر رضوان اکرم کو ہائر ایجوکیشن کمیشن کے رولز کی خلاف ورزی کرتے ہوئے تعینات کیا گیا ہے، ہائر ایجوکیشن کمیشن کے رولز کے مطابق پروفسیر کے عہدے پر صرف وہی امیدوار تعینات ہو سکتا ہے جس کے 12ریسرچ آرٹیکلز ایچ ای سی کے منظور کردہ جرنلز میں شائع ہوں لیکن چاروں پروفیسر صاحبان کے ریسرچ آرٹیکلز نامکمل بھی ہیں اور غیرمتعلقہ موضوعات پر شائع ہیں اور ان کی تعداد بھی کم ہے.

انہوں نے مزید موقف اختیار کیا کہ سلیکشن بورڈ کے دو ممبران چاروں پروفیسرز کو تعیناتی کے لئے نااہل قرار دیا تھا لیکن سابق وائس چانسلر مجاہد کامران نے بورڈ کے ممبران تبدیل کر کے دوبارہ اجلاس بلایا اور ملی بھگت کر کے چاروں پروفیسرز کی تعیناتی کے نوٹیفکیشن جاری کر دیئے ہیں، انہوں نے استدعا کی کہ چاروں پروفیسر کی تعیناتی غیرقانونی قرار دیتے ہوئے کالعدم کی جائے، عدالت نے یونیورسٹی انتظامیہ کو اور چاروں پروفیسرز کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 9 فروری تک جواب طلب کر لیاہے ۔

مزید :

لاہور -