جب مسلمانوں نے ماسکو فتح کرکے روس میں اسلامی پرچم لہرادیا،ترکوں کا اس فتح میں کیا کردار تھا ،جان کرآپ کا سر فخر سے بلند ہوجائے گا

جب مسلمانوں نے ماسکو فتح کرکے روس میں اسلامی پرچم لہرادیا،ترکوں کا اس فتح ...
جب مسلمانوں نے ماسکو فتح کرکے روس میں اسلامی پرچم لہرادیا،ترکوں کا اس فتح میں کیا کردار تھا ،جان کرآپ کا سر فخر سے بلند ہوجائے گا

لاہور(ایس چودھری)ایک وہ زمانہ بھی تھا جب ترکوں کے گھوڑوں اور توپ خانہ نے روس کے بڑے مرکزی شہر ماسکو کو روند کر سلطنت عثمایہ کا پرچم لہرا دیا تھا ۔سلطنت عثمانیہ کا دائرہ روس کے اندر تک پہنچ گیا ۔کریملن شہر کا نام بھی ترکوں نے رکھا ،یہ ترک زبان کا لفظ ہے۔کریمیا کی سلطنت پرترکوں کے زیر کمان تاتار مسلمانوں نے تین سو سال حکومت کی ”اٹلس فتوحات اسلامیہ“ میں اس فتح کے بارے لکھاہے کہ 1571ءکے موسمِ بہار میں کریمیا کی گِرائی سلطنت کے حکمران (خان ) نے ایک لاکھ 20 ہزار کے لشکر کے ہمراہ روس کا رخ کیا۔ اس لشکر میں عثمانی فوج اور توپخانہ بھی شامل تھا۔ اس کا مقصد روس کی ہوس ملک گیری کا سدِ باب تھا۔ اس حملے میں 8 ہزار روسی مارے گئے اور ان کی فوج تتر بتر ہو گئی۔ روسی ماسکو کا دفاع بھی نہ کر سکے اور 27 ذی الحجہ 979 ھ/ مئی 1571 ءکو عثمانی ماسکو میں داخل ہو گئے۔ خان کریمیا ماسکو سے پندرہ ہزار قیدیوں کے ساتھ لوٹا۔ اس فتح کے بعد اس کا لقب ”تخت آلان “یعنی ”تخت حاصل کرنے والا “ پڑ گیا۔

1572 ء میں گرائیوں نے روس پر دوسرا حملہ کیا اور دریائے اوکا تک جا پہنچے۔ اس فتح کا نتیجہ یہ ہوا کہ روسیوں نے 60 ہزار طلائی لیر ے سالانہ خراج ادا کرنا قبول کیا۔ کریمیا اور روس میں صلح طے پا گئی۔ اس جنگ میں تاتاری بندوقوں کے حملے کی تاب نہ لا کر زارِ روس آئیون چہارم 30 ہزار گھڑ سوار اور 6 ہزار پیادے پیچھے چھوڑ کر ماسکو سے فرار ہو گیا تھا۔ قصر کریملن میں موجود زار کا خزانہ مسلمانوں کے ہاتھ لگا تھا اور زارینہ روس (ملکہ ) کے دو بھائی جنگ میں مارے گئے تھے۔ ان واقعات سے روس کا حکمران خانوادہ ”رورک “ تباہی کے کنارے پہنچ گیا۔ سلطان سلیم ثانی نے اس فتح پر گِرائی حکمران کو مبارکباد بھیجی اور مرصع تلوار ، خلعت اور شاہی فرمان سے نوازا۔

یہ بھی پڑھیں ” بھٹونے مارشل لا لگانے پر ضیا الحق کو سراہا اور کہااب ہم دونوں مل کر یہ کام کریں گے “ ایک ایسا انکشاف جسے سنتے ہی جیالوں پر سکتہ طاری ہوجائے گا

مزید : ڈیلی بائیٹس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...