’توبہ توبہ اتنی اخلاق باختہ گفتگو‘ سعودی عرب میں ایک لڑکی کی فون کال کی ایسی ریکارڈنگ منظرِ عام پر آگئی کہ ملک میں ہنگامہ برپا ہو گیا، فوری پکڑنے کا مطالبہ کر دیا گیا

’توبہ توبہ اتنی اخلاق باختہ گفتگو‘ سعودی عرب میں ایک لڑکی کی فون کال کی ...
’توبہ توبہ اتنی اخلاق باختہ گفتگو‘ سعودی عرب میں ایک لڑکی کی فون کال کی ایسی ریکارڈنگ منظرِ عام پر آگئی کہ ملک میں ہنگامہ برپا ہو گیا، فوری پکڑنے کا مطالبہ کر دیا گیا

جدہ(مانیٹرنگ ڈیسک)سعودی عرب جیسے روایتی اور قدامت پسند معاشرے میں ایک غیر ملکی خاتون نے ایمر جنسی سروس کو کی گئی فون کال کے دوران ایسی بدزبانی کا مظاہرہ کیا کہ اپنے بیہودہ اور نسل پرستانہ الفاظ سے پورے ملک میں ایک ہنگامہ کھڑا کر دیا ہے۔ 

سعودی گزٹ کے مطابق سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو سامنے آئی ہے جس میں خود کو امریکی شہری بتانے والی خاتون ایمر جنسی سروس کے ایک اہلکار کو بدترین الفاظ میں نسل پرستانہ حملے کا نشانہ بناتی سنائی دیتی ہے۔ خاتون ایمرجنسی سروس اہلکار سے کہتی ہے کہ ” میں امریکی ہوں اور کسی ایسے شخص سے بات کرنا چاہتی ہوں جو انگریزی بولنا جانتا ہو۔ “ اہلکار اسے جواب دیتا ہے کہ وہ صرف عربی بولنا جانتا ہے، اور پھر وہ خاتون کو انتظار کرنے کیلئے کہتا ہے تاکہ وہ اس کی بات انگریزی بولنے والے کسی اہلکار سے کروا سکے۔ بس اتنی سی بات پر خاتون آپے سے باہر ہو جاتی ہے اور غصے میں آکر انتہائی توہین آمیز اور نسل پرستانہ الفاظ کا استعمال کرتی ہے۔

اس خاتون پر تنقید کرنے والوں میں سوشل میڈیا صارف نائف العبیدی بھی شامل تھے ، جن کا کہنا تھا ” اگر کوئی امریکا میں ایمرجنسی نمبر 911 پر کال کرے تو کیا اسے عربی جواب میں مل سکتا ہے ؟ “ اسی طرح ایک خاتون انٹرنیٹ صارف کا کہنا تھا ” غیر ملکیوں کو چاہیئے کہ وہ سعودی عرب آئیں تو مقامی زبان کا احترام کریں۔“ جبکہ سوشل میڈیا صارف ڈاکٹر قاثاب العبیدی کا کہنا تھا ” خاتون نے غیر مناسب زبان استعمال کی لیکن یہ بھی ضروری ہے کہ ایمر جنسی کال سنٹروں میں ایسے افراد کو بھی تعینات کیا جائے جوانگریزی زبان بول سکیں۔“

مزید : عرب دنیا

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...