شہریوں نے گیس کی قیمتوں میں اضافہ مسترد کر دیا،حکومت سے نرخ کم کرنے کا مطالبہ

شہریوں نے گیس کی قیمتوں میں اضافہ مسترد کر دیا،حکومت سے نرخ کم کرنے کا مطالبہ

  



لاہور(لیاقت کھرل) حکومت اوگرا کی جانب سے گیس کی قیمتوں میں تجویز کردہ اضافہ کے فیصلوں کو کالعدم قراردے۔ گیس کی قلت کو دور کرے اور گیس کی قیمتوں میں 6 ماہ پہلے سے کئے گئے اضافہ کو بھی واپس لیا جائے۔ ا ن خیالات کا اظہار شہریوں نے روزنامہ ”پاکستان“ کی جانب سے گیس کی قیمتوں میں ممکنہ اضافہ کے حوالے سے کئے گئے سروے میں کیا ہے۔ اس موقع پر شہریوں عاکب اقبال، عاصم نور، اسد نواز، اسلم شاہ اور انور علی طور نے کہا کہ گیس ایک قدرتی تحفہ ہے۔ حکومت نے پہلے گیس کی قیمتوں میں 35فیصد اضافہ کر رکھا ہے۔ جس سے گیس کا بل سینکڑوں سے ہزاروں میں پہنچ گیا ہے اور اب گیس کی قیمتوں میں ایک مرتبہ پھر اضافہ کیا جا رہا ہے۔جس سے گیس کا استعمال ناگزیر ہو کر رہ جائے گا اور گیس کے بل ادا کرنا ناممکن بن کر رہ جائیں گے۔ اس موقع پر گڑھی شاہو کے فقیر علی، فہد علی، انوار حسین، عاصم خان، نرگس بی بی، بتول اعظم، سکینہ عادل اور اعجاز ثاقب نے کہا کہ گیس کی قیمتوں میں آئے روز اضافہ سمجھ سے بالاتر ہے کہ سردی کا موسم شروع ہوتے ہی گیس کا پریشر کم ہو جاتا ہے اور اب سردی کی شدت بڑھتے ہی گھروں میں گیس نہیں آ رہی ہے تو اوپر سے گیس کی قیمتوں میں اضافہ کرنے جیسی خبریں سننے کو مل رہی ہیں جو کہ غریب عوام ہے،ایک بم گرانے کے مترادف ہو گا۔

  انہوں نے کہا کہ اس سے زندگی کے تمام شعبے متاثرہ وں گے جبکہ غریب آدمی سب سے زیادہ متاثر ہو گا۔ اس موقع پر محمد اکرم، اکبر علی، اظہر نواز، مہر اسلم اور سکینہ بی بی نے کہا کہ غریب عوام پہلے مہنگائی کی چکی میں پس کر رہ گئے ہیں، بجلی اور گیس پہلے ہی مہنگی ہے اور آئے روز بجلی کی قیمتوں میں اضافہ کیا جارہا ہے کہ جبکہ گیس پہلے ہی بہت مہنگی ہے اور اگر اب گیس کی قیمتوں میں مزید اضافہ کیا جاتا ہے تو یہ عوام دشمنی ہو گی۔جبکہ گیس کی قیمتوں میں ممکنہ اضافہ ہے تندور مالکان عابد علی، عباس علی، محمد فاروق، محمد فایض اور یعقوب نے کہا ہے کہ گیس ایک قدرتی نعمت ہے، حکومت اس ذخائر میں اضافہ کرے اور اگر گیس کی قیمتوں میں اضافہ کیا جاتا ہے تو نان روٹی کی قیمتوں میں اضافہ کرنا پڑے گا۔ جس میں نان20روپے اور روٹی کی قیمت 12روپے کرنا پڑے گی پہلے تندوروں پر گیس نہیں آ رہی ہے کہ سلنڈر اور لکڑیوں سے تندور چلا رہے ہیں، گیس کے پریشر میں کمی واقع ہو گی ہے اور حکومت کو چاہئے کہ پہلے گیس کی ڈیمانڈ کو پورا کرنے میں اپنا کردار ادا کرے، انہوں نے کہا کہ حکومت نے گیس کی قیمتوں میں اضافہ کیا تو تندور چلانے مشکل ہو جائے گا، ایک طرف گیس کے بھاری بل ادا کر رہے ہیں تو دوسری طرف ایل پی جی اور مہنگے داموں لکڑیاں خرید رہے ہیں اور اوپر سے گیس کی قیمتوں میں ایک مرتبہ پھر اضافہ کیا جا رہا ہے جو کہ نیا پاکستان بنانے کا نعرہ لگانے والوں کے لئے لمحہ فکریہ ہو گا، عوام کو غربت سے نکال کر حالت بدلنے کا نعرہ لگانے والوں نے عوام سے جینے کا حق پہلے ہی چھین کر رکھ لیا ہے اور الٹا آئے روز بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ سمجھ سے بالاتر ہے انہوں نے کہا کہ حکومت گیس کی قیمتوں میں ہونے والے ممکنہ اضافہ کو واپس لے اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ کرنے کی بجائے گیس کی قیمتوں میں کمی کرے اور گیس کی قلت کو دور کرنے کے لئے اقدامات کرے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1