محمد حسین محنتی کا احتجاجی اساتذہ سے اظہار یکجہتی،رہائی و مقدمات ختم کرنے کا مطالبہ

محمد حسین محنتی کا احتجاجی اساتذہ سے اظہار یکجہتی،رہائی و مقدمات ختم کرنے ...

  



کراچی(اسٹاف رپورٹر)جماعت اسلامی سندھ کے امیر وسابق ایم این اے محمد حسین محنتی نے اپنے مطالبات کے حق میں احتجاج کرنے والے اساتذہ پرپولیس تشدد وگرفتاریوں کی سخت مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ گرفتار اساتذہ کو رہا،جھوٹے مقدمات ختم اورعدل وانصاف کے مطابق ان کو مستقل کیا جائے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی پریس کلب پرپہنچ کراساتذہ کے احتجاجی کیمپ میں اظہار یکجہتی کے دوران اپنے خطاب میں کیا۔انہوں نے مزید کہا کہ یہ کتنے افسوس ودکھ کی بات ہے کہ اس جمہوری دور میں بھی معزز پیشہ سے وابستہ اساتذہ کرام کو اپنے جائز حقوق کے حصول کے لیے جیل اورلاٹھیاں کھانی پڑتی ہیں۔بزرگ مردوخواتین اساتذہ کے ساتھ توہین آمیز رویہ وبدترین تشدد نے دور آمریت کو بھی پیچھے چھوڑدیا ہے۔تعلیمی ایمرجسی کے اعلان کے باوجود اساتذہ کے مسائل کو سن کر افہام وتفہیم کے ساتھ مسائل حل کرنے کی بجائے کشیدگی کا ماحول تعلیم دشمنی کے مترادف ہے۔ این ٹی ایس،سندھ یونیورسٹی اساتذہ گذشتہ دس سالوں سے اپنے فرائض سرانجام دے رہے ہیں ان کو مستقل کرنے کی بجائے شعبہ تعلیم میں 37ہزار اساتذہ بھرتی کرنے اعلان حکومتی بدنیتی کو ظاہرکرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی اساتذہ کے ساتھ بھرپور اظہار یکجہتی کرتی ہے۔ اساتذہ معاشرے کا اہم اور قابل احترام حصہ ہیں ان کے ساتھ پولیس کا یہ رویہ اور سلوک کسی طرح بھی ایک مہذب معاشرے میں قبول نہیں کیا جا سکتا۔ سندھ حکومت کی ذمے داری ہے کہ وہ ان کے مسائل حل کرے اور یہ نوبت ہی نہ آئے کہ اساتذہ کرام احتجاج کر نے اور سڑکوں پر نکلنے پر مجبور ہوں۔صوبائی امیر نے احتجاجی اساتذہ کو اپنے بھرپور تعاون اورسندھ میں تعلیم کی بھتری کے لیے اساتذہ کرام کو اپنے بھرپور کردار ادا کرنے پرزور دیا۔

مزید : صفحہ اول /پشاورصفحہ آخر