حاملہ خواتین کو کس ماہ میں کورونا وائرس ہو تو بچے کو منتقل ہونے کا خطرہ بہت کم ہوتاہے؟ تازہ تحقیق میں سائنسدانوں کو جواب مل گیا

حاملہ خواتین کو کس ماہ میں کورونا وائرس ہو تو بچے کو منتقل ہونے کا خطرہ بہت کم ...
حاملہ خواتین کو کس ماہ میں کورونا وائرس ہو تو بچے کو منتقل ہونے کا خطرہ بہت کم ہوتاہے؟ تازہ تحقیق میں سائنسدانوں کو جواب مل گیا

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کی اس موذی وباءکے دوران ایسے واقعات بھی سامنے آ چکے ہیں جن میں حاملہ خواتین کو وائرس لاحق ہوا اور وہ ان کے پیٹ میں پرورش پاتے بچے کو بھی منتقل ہو گیا۔ اب اس حوالے سے نئی تحقیق میں سائنسدانوں نے مزید تفصیل بتا دی ہے۔ میل آن لائن کے مطابق سائنسدانوں نے کورونا وائرس میں مبتلا رہنے والی 64حاملہ خواتین پر تحقیق کے بعد بتایا ہے کہ ایسی خواتین جن کو حمل کے آخری تین ماہ کے دوران کورونا وائرس لاحق ہو، ان کے بچوں کو وائرس منتقل ہونے کا خطرہ نہ ہونے کے برابر ہوتا ہے۔

 میساچوسٹس جنرل ہسپتال اور ہارورڈ میڈیکل سکول کے سائنسدانوں کی اس مشترکہ تحقیق میں بتایا گیا کہ ایسی خواتین جنہیں کورونا وائرس حمل کی پہلی دو سہ ماہیوں کے دوران لاحق ہو، ان کے پیٹ میں پرورش پاتے بچوں کو وائرس منتقل ہونے کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔تحقیقاتی ٹیم کی سربراہ ڈاکٹر ڈیانا بیانشی کا کہنا تھا کہ ”ہماری تحقیق میں یہ معلوم ہوا کہ جن خواتین میں کورونا وائرس کی علامات زیادہ شدید ہوئیں، ان کے جسم سے بچے کو خوراک کی رسد میں کمی واقع ہوئی، جس کے نتیجے میں ان کے بچوں کی نشوونما کسی حد تک متاثر ہوئی۔ “

مزید :

تعلیم و صحت -کورونا وائرس -