کالعدم تنظیم کو مالی معاونت فراہم کرنے کے چار مقدمات کی سماعت 9مارچ تک ملتوی کرنیکا حکم

    کالعدم تنظیم کو مالی معاونت فراہم کرنے کے چار مقدمات کی سماعت 9مارچ تک ...

  



ملتان (کو رٹ رپورٹر) انسداد دہشتگردی کی خصوصی عدالت نمبر ایک ملتان نے کالعدم تنظیم لشکر طیبہ کی ذیلی تنظیم کو جائیداد فروخت اور مالی معاونت فراہم کرنے کے چار مختلف(بقیہ نمبر20صفحہ12پر)

مقدمات کی سماعت 9 مارچ تک ملتوی کر نے کا حکم دیا ہے۔ اس موقع پر عدالت میں سپرنٹنڈنٹ ڈسٹرکٹ جیل شیخوپورہ کی جانب سے دی گئی درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ ملزمان کے خلاف لاہور دیگر دہشتگردی کی کارروائیوں میں ملوث ہونے کے مقدمات کی سماعت لاہور انسداد دہشت گردی کی عدالت میں مقرر ہے اس وجہ سے ملزمان کو جیل سے لاہور لے جایا گیا ہے جن کو آئندہ سماعت پر عدالت پیش کر دیا جائے گا اس لئے استدعا ہے کہ مقدمہ کی سماعت ملتوی کی جائے۔قبل ازیں فاضل عدالت میں پولیس تھانہ کاؤنٹر ٹیرارزم ڈیپارٹمنٹ کے مطابق مقدمہ میں دہشت گردی سمیت دیگر دفعات شامل کی گئیں تھیں۔ ملزمان پر الزام ہے کہ ملزمان نے علم ہونے کے باوجود کالعدم تنظیم اور اسکی ذیلی تنظیم کو معاونت فراہم کی ملزمان نے جن لوگوں کو مدد فراہم کی وہ صوبہ کے کئی شہروں میں دہشت گردی کے واقعات کرانے میں ملوث ہیں۔گرفتار ملزمان محمد یحییٰ، ملک ظفر اقبال، اشتہاری ملزمان ڈاکٹر محمد ایوب، عبداللّٰہ عبید، عمر فاروق، محمد داؤد، محسن بلال، ڈاکٹر احمد داؤد اور محمد نعیم کے خلاف دو جولائی 2019 میں کالعدم تنظیم لشکر طیبہ کی ذیلی تنظیم الانفال ٹرسٹ کو مالی مدد فراہم کرنے اور اراضی کی خریداری میں ملوث ہونے کا مقدمہ درج کیا، اسی تھانہ کے مطابق اشتہاری ملزمان غلام حسن، عبدالغفار، امیر حمزہ،حافظ مسعود کمال اور گرفتار ملزم ملک ظفر اقبال کے خلاف میاں چنوں میں کالعدم تنظیم کو معاونت فراہم کرنے،دریں اثناء تھانہ سی ٹی ڈی ملتان کے مطابق اشتہاری ملزمان منیر احمد، محمد نعیم، محسن بلال، عبداللّٰہ عبید اور محمد ایوب جبکہ گرفتار ملزمان ملک ظفر اقبال، حافظ عبد الرحمن، اور حاجی محمد اشرف کے خلاف ماچھیوال ضلع وہاڑی میں کالعدم تنظیم کو معاونت فراہم کرنے کا مقدمہ درج کیا گیا، اسی تھانہ کے مطابق اشتہاری ملزمان محمد رفیق، طاہر، جاوید اقبال، محمد نعیم، سیف اللّٰہ، محمد ایوب اور حافظ ادریس، گرفتار ملزمان ملک ظفر اقبال، حافظ عبدالرحمن اور حافظ عبدالسلام کے خلاف مقدمہ کا اندراج کیا گیا تھا۔

حکم

مزید : ملتان صفحہ آخر