چلڈرن کمپلیکس: نیورالوجی کانفرنس‘ جدید طریقہ علاج‘ ریسرچ ورک پر بحث 

  چلڈرن کمپلیکس: نیورالوجی کانفرنس‘ جدید طریقہ علاج‘ ریسرچ ورک پر بحث 

  

ملتان (وقا ئع نگار)چلڈرن کمپلیکس شعبہ نیورالوجی کے زیر اہتمام دو روزہ نیورالوجی کانفرنس منعقد کی گئی کانفرنس کے مہمان خصوصی ڈین پروفیسر ڈاکٹر وقار ربانی۔ایکس(بقیہ نمبر38صفحہ 6پر)

 پراجیکٹ ڈائریکٹر خالدعباس بخاری تھے کانفرنس سے خطاب میں پروفیسر نزہت نورین۔پروفیسر عمران اقبال۔آغا خان ہسپتال کراچی سے پروفیسر شہنازابراہیم۔ پروفیسر پریم چند۔ ڈاکٹر شیروان قیصر۔ڈاکٹر اجمل چوہدری۔ڈاکٹر ذولفقار علی رانا۔ڈاکٹر فیصل ظفر۔ڈاکٹر نویدانجم۔ڈاکٹر چمن لعل ڈاکٹر حافظ اشفاق احمد ودیگر ماہرین نیورالوجسٹ نے  بچوں کے دماغ واعصاب سے متعلق بیماریوں۔مرگی۔دماغی سوزش۔یاداشت کی کمی۔جینیٹک انالائسز کے تشخیصی ٹیسٹ۔پیدائشی نقائص۔گردن توڑ بخار۔نیورومیٹا بولک۔دماغی رسولیوں کی بیماریوں کے متعلق علامات۔تشخیص انکا جدید طریقہ علاج بارے ریسرچ ورک اور مقالہ جات پرشرکا کو تفصیل سے روشناس کرایا۔پروفیسر وقار ربانی نے کہاکہ چلڈرن کمپلیکس میں بچوں کی دماغی تمام بیماریوں کا علاج۔ای ای جی ٹیسٹ۔ای ایم جی اوراین سی ایس ٹیسٹ کی فری سہولیات موجود ہیں۔ان بیماریوں سے بچاو کیلئے نیوروفزیشن اور نیورالوجسٹ ڈاکٹرز کی تعداد میں اضافہ ہونا چاہیے تاکہ مریض بچوں کو بروقت ماہرین نیورالوجسٹ کی طبی خدمات ملنی چاہیے۔کانفرنس سے ڈاکٹر اجمل چوہدری ڈاکٹر فیصل ظفر ڈاکٹر ذوالفقار علی رانانے کہا کہ مرگی ایک قابل علاج مرض ہے اسکے لئے مریض بچہ کو جعلی پیروں فقیروں کے پاس جا کے علاج نہیں کرانا چاہئے بیماری کی تشخیصی ٹیسٹ ای ای جی کے بعد اسکا علاج شروع ہوجانا چاہئیے۔اور پروفیسر ڈاکٹر نزہت نورین کی زیر نگرانی انگلینڈ سے  جینیٹک انالائسزgenetic analysis ٹیسٹ چلڈرن ہسپتال میں فری کروائے جاتے ہیں۔بچوں کے پیدائشی دماغی مسائل جن میں مرگی کے جھٹکے لگنا۔یاداشت کی کمی چلنے پھرنے میں تاخیر جیسی بیماریوں کیلیے جینیٹک ٹیسٹ لازمی کرانا چاہیے۔کانفرنس کے اختتام میں ملک بھر سے آئے ہوئے ماہرین نیورالوجسٹ کو اعزازی شیلڈز وسرٹیفکیٹ بھی تقسیم کئے گئے۔

بحث

مزید :

ملتان صفحہ آخر -