ہنزہ کے گلمیت گاﺅں میں علی سدپارہ کو نوجوانوں کا خراج عقیدت ، یہ اوزار اٹھائے کیا کام کر رہے ہیں ؟ جان کر آپ بھی سیلیوٹ کریں گے 

ہنزہ کے گلمیت گاﺅں میں علی سدپارہ کو نوجوانوں کا خراج عقیدت ، یہ اوزار ...
ہنزہ کے گلمیت گاﺅں میں علی سدپارہ کو نوجوانوں کا خراج عقیدت ، یہ اوزار اٹھائے کیا کام کر رہے ہیں ؟ جان کر آپ بھی سیلیوٹ کریں گے 
سورس:   facebook

  

ہنزہ (ڈیلی پاکستان آن لائن )پاکستان کے ہیرو کوہ پیما علی سدپارہ کے ٹو سر کرنے کی مہم کے دوران اپنے دو غیر ملکی ساتھیوں کے ہمراہ پانچ فروری کو لاپتا ہو گئے تھے جن کو ڈھونڈنے کیلئے ایک طویل آپریشن کیا گیا لیکن کامیابی نہ مل سکی اور کئی روز تلاش کرنے کے بعد ساجد علی سدپارہ نے اپنے والد کی موت کی تصدیق کی ۔

علی سدپارہ کی موت نے تمام پاکستانیوں کے دلوں کو دکھ سے بھر دیا اور ہر کوئی یہ دعائیں کر تا دکھائی دیا کہ علی سدپارہ کسی طریقے سے واپس آ جائیں تاہم پہاڑ انہیں اپنے آغوش میں لے چکے ہیں ، علی ظفر نے علی سدپارہ کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے گانا بھی جاری کیا ۔ علی سدپارہ کا تعلق پاکستان کے خوبصورت ترین علاقے گلگت بلتستان سے تھا اور اب سوشل میڈیا پر ایک مختصر ویڈیو وائرل ہو رہی ہے جس میں وادی گوجل میں مقامی رضاکاروں نے ’ اوندرا پوئے گاہ گلمیت ‘ پر دوبارہ کام شروع کرنے سے قبل علی سدپارہ کو قطار میں کھڑے ہو کر خراج عقیدت پیش کیا ۔یہ ویڈیو ’ پامیر ٹائمز ‘ نامی فیس بک پیج کی جانب سے شیئر کی گئی ہے۔

یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ ’ اوندرا ‘ پہاڑی کا نام ہے اور یہ اس پہاڑی پر واقعہ قدیم قلعے کا بھی نام ہے جبکہ ’ پوئے گاہ ‘ مقامی زبان ’ واکھی ‘ کا لفظ ہے جس کا مطلب ’ سیڑھی ‘ ہے ۔ ’ اوندرا پوئے گا گلمیت ‘ ایک پراجیکٹ ہے جو کہ گلمیت گاﺅں کے مقامی رضاکاروں نے خود شروع کیاہے ، جس میں پہاڑی پر واقع اوندرا قلعے کو سڑھیوں کے ذریعے گلمیت وادی کے ساتھ جوڑا جا رہاہے ۔جس کے باعث اسے ’ اوندرا پوئے گاہ گلمیت‘ کا نام دیا گیاہے ۔

آپ کو یہ جان کر حیرت ہو گی کہ اوندرا پوئے گاہ میں بنائی جانے والی سیڑھیاں کمیونٹی کی جانب سے بنائی جانے والی سیڑھیوں میں سب سے زیادہ لمبی ہونے کا درجہ رکھیں گی ۔یہ پراجیکٹ ابھی زیر تعمیر ہے اور اب تک دو ہزار سیڑھیاں تعمیر کی جا چکی ہیں جبکہ یہ سیڑھیاں تقریبا 3500 میٹر تک بنائی جانی ہیں ۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -