جموں میں پناہ گزینوں کو شہریت دینے کی کوششوں کو ناکام بنایا جائیگا، یاسین ملک

جموں میں پناہ گزینوں کو شہریت دینے کی کوششوں کو ناکام بنایا جائیگا، یاسین ...

سرینگر(کے پی آئی)جموں میں پناہ گزینوں کو شہریت دینے کی کسی بھی کوشش کو ناکام بنانے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے لبریشن فرنٹ چیئرمین محمد یاسین ملک نے کہا کہ اس کے خلاف ہر کشمیری سڑکوں پر نکلے گا اور اپنی جاں بھی دینے کیلئے تیار ہوگا ۔بدھ کو سانحہ گاؤ کدل کی 25ویں برسی کے موقعہ پرمائسمہ سے بسنت باغ تک نکالے گئے جلوس سے خطاب کرتے ہوئے ملک نے کہا کہ گذشتہ کئی دنوں سے جموں میں پناہ گزینوں کو یہاں کی مستقل شہریت دینے کی بات کی جارہی ہے اور کشمیری قوم اس کی ہرگز اجازت نہیں دے سکتا ۔

انہوں نے کہا کہ اگر بھارت نے اس حوالے سے کوئی پہل کی تو ہر کشمیری سڑک پر آکر اس کے خلاف منظم احتجاج کرے گا اور اس کوشش کو ناکام بنانے کیلئے اپنی جان بھی دے سکتا ہے ۔فرانس میں توہین آمیز خاکوں کی اشاعت کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے ملک نے اس کے خلاف جمعہ کومتحدہ علما اہل سنت کی طرف سے دی گئی ہڑتال کال کی حمایت کرتے ہوئے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ اس دن مکمل ہڑتال کریں ۔انہوں نے کہا کہ جمعہ کو لبریشن فرنٹ کی طرف سے پائین شہر کے خانقائے معلی علاقہ میں بعد دوپہر احتجاجی مظاہرہ کرے گی جس میں جموں میں رفیوجیوں کو شہریت دینے اور فرانس میں توہین آمیز خاکوں کی اشاعت کے خلاف احتجاج کیا جائے گا ۔انہوں نے لوگوں سے جمعہ کے دن مکمل اور بھرپور احتجاجی ہڑتال کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ ہم اپنے پرامن اور مثالی احتجاج سے دنیا پر باور کردیں گے کہ مسلمان سب کچھ برداشت کرسکتا ہے مگر آنحضورؓ کی شان میں کوئی بھی گستاخی برداشت نہیں کرے گا ۔سانحہ گاؤ کدل کا ذکر کرتے ہوئے ملک نے کہا کہ 21جنوری کا دن جموں کشمیر کی پانچ ہزار سالہ تاریخ کا ایک اہم ترین دن ہی۔ یہ وہ پہلا دن ہے کہ جب کشمیریوں نے آزادی کیلئے عوامی انقلاب کی صورت میں کرفیو توڑ کراپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرکے قوم پر لگی اس لیبل کو ہٹا لیا کہ کشمیری بزدل قوم ہے ۔انہوں نے کہا کہ یہی وہ دن ہے کہ جب بھارت کی فوج اور فورسز نے کشمیر کی ہر گلی اور ہر بستی کو جلیانوالہ باغ بنانے کی شروعات کی۔انہوں نے کہا کہ بھارت کی تاریخ آزادی کے دوران اگرچہ ایک جلیانوالہ باغ کا واقعہ ہی تھا لیکن بھارت کی حکومت نے گاؤ کدل، ہندوارہ،سوپور،بائی پاس ،زکورہ ،بجبہاڑہ اور نہ جانے کتنے جلیانوالہ باغ بنائے اور ہزاروں لوگوں کو تہہ تیغ کیا۔ملک نے کہا کہ سانحہ گاؤ کدل اس وقت پیش آیا جب مفتی محمد سعید بھارت کے وزیر داخلہ تھے اور سابق گورنر جگموہن نے 21جنوری 1990کے قتل عام کا منصوبہ 19جنوری کو ہی اس وقت بنایا تھا جب انہوں نے یہاں سے پنڈتوں کو نکالا ۔ملک نے کہا کہ گاؤ کدل قتل عام کے بعد کشمیر کی ہربستی میں کشمیریوں کا قتل عام شروع کیا گیا اور آج یہاں ایسی کوئی بستی نہیں ،جہاں کے قبرستان شہدا سے بھرے ہیں ۔ تحریک آزادی میں نوجوانوں کے رول کو انتہائی اہم قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ قوم کا اجتماعی فرض ہے کہ وہ تحریک آزادی کو منطقی انجام تک پہچانے تک زور و شور سے جد و جہد جاری رکھیں ۔انہوں نے کہا کہ قوم کو چاہئے کہ وہ اپنا احتساب کرئے اور بجلی ،پانی اور سڑک کیلئے دئے جانے والے ووٹ کو بعد میں کس طرح بھارت بین الاقوامی سطح پر یہ کہہ کر اچھالتا ہے کہ یہ ووٹ بھارت کے حق میں ملا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ایک طرف یہی نوجوان تحریک آزادی کی خاطر اپنی جاں قربان کرتا ہے اور دوسری طرف یہی نوجوان ووٹنگ عمل میں پیش پیش ہوتا ہے ۔انہوں نے نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ تحریک آزادی کی حفاظت کریں ۔6جنوری کے موقعہ پر امریکی صدر باراک اوبامہ کے دورہ بھارت پر ملک نے کہا کہ اوبامہ اگر دنیا میں امن چاہتے ہیں تو انہیں کشمیر ،فلسطین اور دیگر متنازعہ خطوں کے لوگوں کے بنیادی مسئلہ کو حل کرنا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ دنیا میں حقیقی امن کی خاطر پہلے متنازعہ مسائل کو حل کرنا ہوگا تبھی امن قائم ہوسکتا ہے۔

مزید : عالمی منظر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...