دہشتگردی کیخلاف جنگ کو اسلام ولبرل ازم کی جنگ تصور نہ کیا جائے، سابق عسکری و سیاسی قیادت

دہشتگردی کیخلاف جنگ کو اسلام ولبرل ازم کی جنگ تصور نہ کیا جائے، سابق عسکری و ...

لاہور (اے این این، مانیٹرنگ ڈیسک)محکمہ اطلاعات و ثقافت پنجاب کے زیر اہتمام ’’دہشت گردی کے خلاف قوم کا عزم صمیم‘‘ کے موضوع پر پنجابی کمپلیکس لاہور میں سیمینارمنعقد کیا گیا ۔جذبہ فاؤنڈیشن کے صدر ، سابق گورنر پنجاب لیفٹیننٹ جنرل(ر) خالدمقبول اس موقع پر مہمان خصوصی تھے۔سیمینار میں چیئرمین بورڈ آف گورنرزلاہور آرٹس کونسل عطاالحق قاسمی، قومی اسمبلی کے رکن شفقت محمود،سابق وزیرتعلیم پنجاب میاں عمران مسعود، پاکستان علماء کونسل کے چیئرمین حافظ طاہر محموداشرفی، مہتمم جامعہ نعیمیہ لاہور ڈاکٹرراغب حسین نعیمی، معروف دانشوروں امجد اسلام امجد، ڈاکٹر عارفہ سیدہ، لیفٹیننٹ جنرل (ر) غلام مصطفی ، محترمہ پروین عاطف، دفاعی تجزیہ کاربریگیڈیئر(ر) نادر میر،پیپلزپارٹی لاہور کے رہنما نوید چوہدری ، معروف کارٹونسٹ جاوید اقبال، اینکرپرسن سہیل وڑائچ، گلوکارشوکت علی، فلم ڈائریکٹر سیدنوراورڈائریکٹرپلاک ڈاکٹر صغری صدف نے بھی اظہار خیال کیا جبکہ صوبائی پارلیمانی سیکرٹری برائے ثقافت پنجاب رانا محمد ارشد نے کلمات تشکر ادا کئے۔لیفٹیننٹ جنرل(ر) خالد مقبول نے اپنے کلیدی مقالے میں اس بات پر زور دیا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کو اسلام اورلبرل ازم کی جنگ تصور نہ کیا جائے کیونکہ پاکستان میں ذاتی اقتدار کے لئے بعض دہشت گرد عناصر غلط طور پر اسلام کا نام استعمال کررہے ہیں۔اسلام سراسرسلامتی اورامن کادین ہے خالد مقبول نے کہا کہ اسلام اتنا کمزور دین نہیں کہ کوئی شرارتی شخص اس پر انگلی اٹھائے تو ہمارے دین پر حرف آجائے گا۔ اگر ایسا ہوتا تو آج پوری دنیا میں اپنے انسانیت دوست وصف کی بناء پر اسلام تیزی سے پنپتا ہوا سب کو دکھائی نہ دیتا ۔انہوں نے کہا کہ جب میں پنجاب کا گورنر تھا تو پولیس والوں سے پوچھا کرتا تھا کہ جو دہشت گرد پکڑے جاتے ہیں ، اسلام کے بارے میں ان کا تصور کیسا ہے؟ مجھے جواب ملتا تھا کہ ان دہشت گردوں سے کلمہ طیبہ سنانے کے لئے بھی کہیں تو جواب ملتا ہے کہ ’’ ہم حالت جنگ میں ہیں اورکلمہ یاد کرنے کی ہمیں فرصت نہیں ‘‘ ۔ انہوں نے کہا کہ کوئی اس غلط فہمی میں نہ رہے کہ طالبان کے لیڈرزاورخوداسامہ بن لادن جب مارے گئے تو وہ شاید سجدے کی حالت میں تھے ۔ایسا بالکل نہیں تھا۔ان کا لائف سٹائل سب کو معلوم ہے معروف دانشور عطاالحق قاسمی نے سیمینار سے خطاب میں کہا کہ ہمارا دشمن بھی اسلامی نظام کی بات کرتا ہے لیکن یہ ان کا خودساختہ اسلام ہے اوریہ سفاک لوگ جو نظام اسلام کے نام پر نافذ کرنے کی بات کرتے ہیں ، وہ ان کے اپنے ذہن کی اختراع ہے ۔ہم نہ صرف دہشت گردی کرنے والے سانپوں کو ان کے بلوں سے نکال کر ختم کریں گے بلکہ ان فتنہ گروں کو جہاں سے نظریاتی غذا فراہم ہورہی ہے ، ہم نفرت کا زہریلا موادپھیلانے والے گوداموں کو بھی تلف کردیں گے۔لیفٹیننٹ جنرل(ر) غلام مصطفی نے کہا کہ اپنے ذہن پر دہشت گردوں کا خوف مسلط نہ ہونے دیں ۔یہیں سے ان کی شکست کا آغاز ہوگا ۔اگر پاکستان میں فرقہ بندی کی دکانیں چلتی رہیں تو یہ سفاک دہشت گرد کسی بھی مسلک کو نہیں چھوڑیں گے ۔

مزید : صفحہ اول

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...