گیس،بجلی لوڈشیڈنگ سے صنعت کاروں اور تاجروں کا معاشی قتل کیا جا رہا ہے،شاہد غوری

گیس،بجلی لوڈشیڈنگ سے صنعت کاروں اور تاجروں کا معاشی قتل کیا جا رہا ہے،شاہد ...

لاہور( نمائندہ خصوصی )سنی تحریک کے مر کزی رہنما محمد شاہد غوری نے کہا ہے کہ حکومت عوام کے جان و مال اور معاشی تحفظ میں مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے ۔گیس اور بجلی کی لوڈشیڈنگ سے صنعت کاروں اور تاجروں کا معاشی قتل کیا جا رہا ہے۔حکمران ملک و قوم کی بجائے اغیار اور آ ئی ایم ایف کی خودشنودی کیلئے سر گرم عمل ہے۔حکمران اپنی عیاشی کا سامان پورا کرنے کیلئے عوام پر ٹیکسوں کا بوجھ ڈال رہے ہیں۔محمد شاہد غوری نے کہا ہے کہ حکمران جماعت الیکشن سے قبل کئے اپنے وعدوں کو پورا کرنے میں ناکام ہو چکی ہے۔بجلی اور گیس کا بحران کرنے کی دعوے داروں کو اب رخصت ہونا چا ہئے۔ہر گرزرتے دن کے مقابلہ میں ملک میں نئے نئے بحران جنم لئے رہے ہیں۔دہشتگردی کے واقعایات سے ایسا محسوس ہو رہا ہے کہ جیسے دہشتگرد پھر سے منظم ہو رہے ہیں۔رہنما ؤں نے کہاکہ پارلیمنٹ میں موجود بعض جماعتیں دہشتگردوں کی پرورش اور حمایت میں مصروف ہیں ۔اچھے برے طالبان اور دہشتگردوں کی تفریق کئے بغیر آپریشن کو مکمل کرنا چاہئے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز صوبائی دفتر سنی تحریک میں ہونے والے اہم اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر مر کزی رہنما محمد شاداب رضا نقشبندی،صوبائی رہنما ڈاکٹر عمران مصطفی،محمد زاہد حبیب قا دری،مفتی لیاقت حسین گجراتی،مو لا نا مجاہد عبد الرسول خان،سردار محمد طاہر ڈوگر،سید عثمان حیدر شاہ نقوی،پروفیسر محمد آصف رضا،ڈاکٹر غلام مرتضٰی تارڈ،مو لانا عبد الحمید چشتی ودیگر نے کہاکہ حکومت بھارت نواز پالیسی چھوڑ کر قومی موقف مد نظر رکھے ۔بلوچستان اور کراچی میں شدت پسندوں کی مالی اور تربیتی معاونت میں بھارت کے ملوث ہونے کے باوجود بھی مر کزی حکومت کو بھارت سے دوستی کی پتنگیں بڑھانے کا بخار ہے۔چارسدہ میں ہونے والی دہشتگردی میں بھارتی ہاتھ کے ملوث ہونے کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔محمد شاداب رضا نقشبندی نے کہاکہ پاکستان کا تجارتی اور صنعتی مستقبل پاک چین راہداری سے منسلک ہے مگر حکومت اپوزیشن جماعتوں کے جائز مطالبات کو تسلیم کرنے میں ناکام نظر آرہی ہے۔چین پاکستان کا درینہ دوست ہمسایہ ملک ہے ۔تمام سیاسی جماعتوں کو ذاتیات کے خول سے نکل کر ملکی مفادات کو ترجیح دینی چاہئے۔چین کے ساتھ تجارتی ،ثقافتی اور صنعتی روابط کو مزید مستحکم کرنا چاہئے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4