7 ماہ گزرنے کے باوجود ٹیچرز یونین کے معاملات حل نہیں ہوئے، رانا لیاقت

7 ماہ گزرنے کے باوجود ٹیچرز یونین کے معاملات حل نہیں ہوئے، رانا لیاقت

لاہور(خبرنگار) پنجاب ٹیچرز یونین کے مرکزی جنرل سیکرٹری رانا لیاقت علی نے کہا ہے کہ16 مئی 2016 کو صوبائی وزیر تعلیم پنجاب نے پنجاب ٹیچرز یونین کے وفد جس کی قیادت مرکزی صدر سید سجاد اکبر کاظمی کر رہے تھے کے ساتھ مذاکرات میں اساتذہ کی اپ گریڈیشن (ایک ماہ) ، پنجاب ٹیچرز فاؤنڈیشن سے اساتذہ کو بلا سود قرضے کی سہولت، پیف و دانش اتھارٹی کو سکولز کی حوالگی پر نظر ثانی ، اساتذہ و ہیڈز کے خلاف بلاجواز کاروائیوں کا سد باب و دیگر مسائل کو جلد اس جلد حل کرانے کی نوید سنائی تھی مگر صد افسوس 7 ماہ گزرنے کے باوجود پنجاب ٹیچرز یونین کے ساتھ طے کردہ معاملات پر عملدرآمد کی بجائے اساتذہ میں خوف وہراس کی فضاء پیدا کر دی گئی ۔تعلیمی اداروں کو تباہ کرنے کیلئے ڈسٹرکٹ ایجوکیشن اتھارٹی قائم کر دی گئی اور مزید ایسے اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں جن سے اساتذہ برادری عدم تحفظ کا شکار ہے۔

جس کی وجہ سے مجبوراً گرینڈ ٹیچرز الائنس کے پلیٹ فارم سے احتجاج کا راستہ اپنانا پڑ رہا ہے۔اساتذہ پرامن اور تعلیمی ترقی میں اپنا کردار ادا کرناچاہتے ہیں لیکن محکمہ تعلیم پنجاب کی یکطرفہ اصلاحات اور پالیسیوں کی وجہ سے اور مسلسل وعدہ خلافیوں و طفل تسلیوں نے اساتذہ کو سڑکوں پر آنے کے لئے مجبور کر دیا ہے۔اس کے باوجود صوبائی وزیر تعلیم پنجاب رانا مشہود احمد خان کی پریس کانفرنس کا خیر مقدرم کرتے ہیں کہ انہیں اساتذہ سے کئے گئے اپ گریڈیشن و دیگر معاملات کے وعدوں کا یاد تو ہے۔ لیکن اس مرتبہ اساتذہ ان کے جھانسے میں نہیں آئیں گے جب تک نوٹیفکیشن جاری نہیں کیا جاتا۔ہمیں انتہائی اقدام " پیک امتحانات کا بائیکاٹ" اٹھانے پر مجبور نہ کیا جائے ۔25 جنوری کو فیصل آباد میں ضلع کونسل ہال کے سامنے گرینڈ ٹیچرز الائنس کے زیر اہتمام احتجاجی جلسہ منعقد ہوگا جس میں آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان متوقع ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4