وزیر داخلہ چوہدری نثار کاپاراچنار میں ممکنہ دہشتگردی کے الرٹس کے باوجود مناسب سیکیورٹی کے انتظامات نہ کئے جانے کی تحقیقات کا حکم

وزیر داخلہ چوہدری نثار کاپاراچنار میں ممکنہ دہشتگردی کے الرٹس کے باوجود ...
وزیر داخلہ چوہدری نثار کاپاراچنار میں ممکنہ دہشتگردی کے الرٹس کے باوجود مناسب سیکیورٹی کے انتظامات نہ کئے جانے کی تحقیقات کا حکم

  

اسلام آباد(آئی این پی)وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے نیکٹا کو وزارت داخلہ کی جانب سے پاراچنار میں ممکنہ دہشت گردی کی کارروائی کے الرٹس جاری ہونے کے باوجود مناسب سیکیورٹی کے انتظامات نہ کئے جانے کی تحقیقات کا حکم دیتے ہوئے کہا ہے کہ اتنی قربانیوں اور کامیابیوں کے بعد ایک بھی واقعہ ہوتا ہے تو قوم میں سخت تشویش پھیلتی ہے، وقت آگیا ہے کہ موثر انٹیلی جنس اطلاعات کے باوجود اگر دہشت گردی ہوتی ہے تو اس کا تجزیہ کیا جائے کہ کہیں یہ سیکیورٹی میں کوتاہی تو نہیں اور اگر ہے تو اس کا کون ذمہ دار ہے۔

پیر کو وفاقی وزیرِداخلہ چوہدری نثار علی خان نے گورنر خیبر پختونخواہ اقبال ظفر جھگڑا سے ٹیلی فونک رابطہ کیا،اس موقع پر وزیر داخلہ چوہدری نثار نے پارہ چنار دھماکے کے نتیجے میں قیمتی جانوں کے ضیائع پر گہرے دکھ کا اظہار کیا،وزیر داخلہ نے موسم کی خرابی کی وجہ سے پارہ چنار روانگی ملتوی ہونے پر گورنر خیبر پختونخوا کو اعتماد میں لیا۔اس موقع پر وزیرِداخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا کہ میں نے نیکٹا کے سربراہ کو ہدایت کی ہے کہ اس بات کی تحقیقات کی جائیں کہ دو واضح تھریٹ الرٹ جو کہ وزارت داخلہ کی جانب سے 25نومبر اور14دسمبر کو جاری کیے گئے انکے باوجود مناسب سیکیورٹی کے انتظامات کیوں نہ کیے گئے، اتنی قربانیوں اور کامیابیوں کے بعد ایک بھی واقعہ ہوتا ہے تو قوم میں سخت تشویش پھیلتی ہے، وزیرداخلہ نے کہا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ موثر انٹیلی جنس اطلاعات کے باوجود اگر اس قسم کے واقعات ہوتے ہیں تو اس کا تجزیہ کیا جائے کہ کہیں یہ سیکیورٹی میں کوتاہی تو نہیں اور اگر ہے تو اس کا کون ذمہ دار ہے۔اس موقع پر گورنر خیبر پختونخواہ نے ایسی ہی تحقیقات اپنی مقامی انتظامیہ سے بھی کرانے کا عندیہ دیا۔

مزید : قومی