کوہاٹ میں ایریگیشن پراپرٹی سے تجاوزات کیخلاف 7 روز مہم کا آغاز

کوہاٹ میں ایریگیشن پراپرٹی سے تجاوزات کیخلاف 7 روز مہم کا آغاز

کوھاٹ (بیورو رپورٹ) حکومت خیبر پختونخو ا کے احکامات کی روشنی میں ڈپٹی کمشنر کوہاٹ خالد الیاس کی ہدایت پر ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر صاحبزادہ نجیب اللہ کی سربراہی میں ا یڈیشنل اسسٹنٹ کمشنر صاحبزادہ سمیع اللہ، تحصیلداراعظم خان اورایریگیشن کے متعلقہ عملہ پرمشتمل ٹیم نے ریموول آف انکروچمنٹ ایکٹ 1977ء کے تحت ایریگیشن پراپرٹی سے تجاوزات کے خلاف7روزہ مہم کے دوسرے روز بھاری مشنری کے ہمراہ جرما کے بعد مسلم آباد اور سورگل کا رخ کر لیا ۔ٹیم نے ایرگیشن نہر کے ایک طرف میں27فٹ جبکہدوسری طرف 44فٹ علاقے سے تجاوزات ہٹانے کاکام جاری رکھا اوربعض مقامات پر 20فٹ سے بھی زیادہ تجاوزات کئے گئے تھے جنہیں ایکسکاویٹر کی مدد سے ہٹایا گیاگزشتہ2 دنوں کے دوران ضلعی انتظامیہ کوہاٹ نے جرما سے ایریگیشن کی تقریباً50 کنال جبکہ سورگل اور مسلم آباد سے تقریباً 45کنال اراضی غیر قانونی قابضین سے واگزار کراکر اس کا قبضہ بھی حاصل کرلیا ہے۔واضح رہے کہ آپریشن کے دوران مسلم آباد میں خیبر ہوٹل اور اس کے باالمقابل بلاکس فیکٹری کا تجاوزات کی ضد میں آنے والا حصہ مسمار کردیا جبکہ سورگل میں ایک گھر کا23فٹ سے زیادہ حصہ بھی ہٹادیاگیااس دوران 2مساجد کے کچھ حصے بھی تجاوزات کی ضد میں آئے جسے علاقے کے لوگوں اور مقامی علماء نے خو د ہٹانے کی یقین دہانی کرائی۔ اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے صاحبزادہ نجیب اللہ نے کہا کہ یہ بات حوصلہ افزاء ہے کہ مقامی لوگ کسی قسم کی مزاحمت کی بجائے انتظامیہ سے بھر پور تعاون کررہے ہیں اور زیادہ تر لوگ اب رضاکارانہ طور پر تجاوزات ہٹارہے ہیں کیونکہ انہیں یقین ہوگیاہے کہ حکومت تجاوزات ہٹانے میں انتہائی سنجیدہ ہے اور اس اہم پر کسی قسم کا سمجھوتہ کرنے کے لئے تیار نہیں۔انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت کی ہدایت پر پورے صوبے میں تجاوزات کے خلاف بلاامتیاز آپریشن جاری ہے اور اس سلسلے میں کسی قسم کا دباؤ ملحوظ خاطر نہیں رکھا جائے گا ۔ان کا کہنا تھا کہ اگلے مرحلے کے لئے ٹی ایم اے بھر پور تیاری کررہی ہے اورتجاوزات کی نشاندہی کی جارہی ہے جس کے بعدرضاکارانہ طور پرتجاوزات ہٹانے کے لئے باقاعدہ طور پر نوٹس جاری کردیئے جائیں گے اور مقررہ ڈیڈلائن میں نوٹس پر عملدرآمد نہ کرنے کی صورت انتظامیہ بھر پور کارروائی شروع کرے گی۔

مزید : پشاورصفحہ آخر