انتخابی اصلاحات ایکٹ کیس،سیاسی رہنماﺅں کی احاطہ عدالت میں میڈیا ٹاک پر پابندی عائد

انتخابی اصلاحات ایکٹ کیس،سیاسی رہنماﺅں کی احاطہ عدالت میں میڈیا ٹاک پر ...
انتخابی اصلاحات ایکٹ کیس،سیاسی رہنماﺅں کی احاطہ عدالت میں میڈیا ٹاک پر پابندی عائد

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ نے انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 کیخلاف درخواستوں کی سماعت کے دوران احاطہ عدالت میں سیاسی رہنماﺅں کی میڈیا ٹاک پر پابندی عائدکر دی ۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 کیخلاف درخواست کی سماعت ہوئی، جس کی سماعت چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں بنچ نے کی، دوران سماعت وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق، راجہ ظفر الحق ، پرویز رشید اور درخواستگزاروں کے وکلاءشریک ہوئے۔

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے احاطہ عدالت میں سیاسی رہنماﺅں کی میڈیا ٹاک پر پابندی عائد کردی،دوران سماعت چیف جسٹس نے سعد رفیق سے مکالہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ کو سن لیتے ہیں مگر آپ کی بات کاجواب نہیں دے سکتے ،اس پر سعد رفیق نے کہا کہ مائی لارڈ! آپ یہاں بول سکتے ہیں ہم نہیں ۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ گڑھے مت کھودیں ،جس نے جو بات کرنی ہے وہ ٹی وی ٹاک شوز میں کرے،انہوں نے کہا کہ عمران خان نے گزشتہ روز بڑی اچھی بات کی اورسعد رفیق نے بھی تقریر کی، چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ تقریر ہمارے پاس بھی پہنچ جاتی ہے۔ یہ نہ ہو ادارے اس قابل نہ رہیں آپ کی آنے والی نسل کو انصاف نہ مل سکے

اس پر راجہ ظفر الحق نے عدالت سے استدعا کی کہ ہمیں 15 روز کا وقت دے دیں، چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ آپ 10 روز کا وقت لے لیں ،وکیل درخواست نے کہاکہ جان بوجھ کو تاخیر کی جا رہی ہے ۔

شیخ رشید کے وکیل نے عدالت سے استدعا کہ عدالت الیکشن ایکٹ سے متعلق حکم امتناع دے،چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ بتادیں کیا قانون سازی کومطل کیا جا سکتا ہے،چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ خواجہ سعد رفیق بڑے جید ہیں،اگر کوئی التوا مانگے گاتو یہاں بڑے مقرر موجود ہیں،چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ تمام فریقین کی حاضری لگا لیں،پہلے راجہ ظفرالحق اور پھر پرویز رشید کا نام لکھیں، چیف جسٹس نے کہا کہ ہمیں سنیارٹی کا پتہ نہیں مگر سعد ررفیق کا نام بولڈلکھیں،چیف جسٹس نے کہا کہ کیا عدالتی حکم میں لوہے کے چنے کا ذکر بھی ہے ۔

سپریم کورٹ نے الیکشن ایکٹ میں نوازشریف سے جواب طلب کرتے ہوئے استفسار کیا کہ نوازشریف کی نمائندگی کون کرےگا،اس پر راجہ ظفر الحق نے کہا کہ پرویزرشید سابق وزیراعظم نوازشریف کی نمائندگی کریں گے،اس پر وکیل شیخ رشید نے کہا کہ نواز شریف کو بطور پارٹی صدر کام سے روکا جائے ،اس پر چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ ہم کس طرح پارٹی صدرکو کام سے روک سکتے ہیں،سپریم کورٹ نے فریقین کو نوٹسز جاری کرتے ہوئے 8 روز میں جواب طلب کرتے ہوئے سماعت6 فروری تک ملتوی کردی۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد