مشرف کیس، خصوصی عدالت کی تشکیل کا لعدم کرنے کے حکم پر نظرثانی کیلئے درخواست دائر

مشرف کیس، خصوصی عدالت کی تشکیل کا لعدم کرنے کے حکم پر نظرثانی کیلئے درخواست ...

  



لاہور(نامہ نگارخصوصی)جنرل (ر)پرویز مشرف کے خلاف سنگین کیس کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت کی تشکیل کالعدم کرنے کے لاہورہائی کورٹ کے حکم پر نظر ثانی کیلئے درخواست دائرکردی گئی ہے،لاہور ہائی کورٹ میں یہ درخواست لائیرز فاؤنڈیشن فار جسٹس نے اے کے ڈوگر ایڈووکیٹ کی وساطت سے دائر کی ہے،درخواست میں وفاقی سیکرٹری داخلہ، سیکرٹری قانون و انصاف، رجسٹرار خصوصی عدالت اور جنرل (ر) پرویز مشرف کو فریق بنایا گیا ہے،درخواست میں موقف اختیار کیا گیاہے کہ درخواست گزار نے لاہور ہائی کورٹ میں جنرل (ر) پرویز مشرف کی درخواست کی سماعت رکوانے کے لئے 13 جنوری کومتفرق درخواست دائر کی تھی،اس متفرق درخواست میں پرویز مشرف کی زیرسماعت درخواست میں فریق بننے کی استدعا کی گئی تھی،عدالت عالیہ کے فاضل بنچ نے درخواست گزار کی استدعا پر بھی غور کرنے کی آبزرویشن دی تھی، ہائیکورٹ کے فل بنچ نے درخواست گزار کا موقف سنے بغیر پرویز مشرف کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا،دیگر فریقین کا موقف سنے بغیر فیصلہ کرنا انصاف کے اصولوں کے منافی ہے،قانونی طور پراپیلٹ فورم کے طور پر سپریم کورٹ موجود ہو تو ہائیکورٹ میں درخواست کی سماعت نہیں ہوسکتی، اس بابت درخواست میں جسٹس خورشید انور بھنڈر بنام وفاقی حکومت کے کیس میں سپریم کورٹ کے 2010ء کے فیصلے کا حوالہ بھی دیا گیا ہے، درخواست میں کہا گیاہے کہ خصوصی عدالت کے قانون مجریہ1976 ء کی دفعہ 12 کے تحت سنگین غداری کیس کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت کے فیصلے کے خلاف 30 روز میں اپیل سپریم کورٹ میں دائر کی جا سکتی ہے، ہائیکورٹ بھی قانون پر عمل درآمد کا پابند ہے،پرویز مشرف کیس کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت اور اس کے فیصلے کو کالعدم کرنے کے حکم پر نظر ثانی کی جائے۔

مشرف کیس

مزید : صفحہ آخر