ڈیرہ، انسداد جرائم کے حوالے سے جامع حکمت عملی طے

  ڈیرہ، انسداد جرائم کے حوالے سے جامع حکمت عملی طے

  



ڈیرہ اسماعیل خان(بیورورپورٹ) ڈیرہ میں امن و امان کی مجموعی صورتحال برقرارکھنے اور انسداد جرائم کے حوالے سے جامع حکمت عملی طے کر لی گئی ہے جبکہ مطلوبہ اشتہاریوں و مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث عناصر کو سختی سے کچلنے کیلئے جامع ایکشن پلان واضح کر دیا گیا ہے،فیلڈ میں خود جا کر عوامی مسائل سے آگاہی حاصل کرنے کیلئے زیادہ سے زیادہ کھلی کچہریوں کا انعقاد کریں،قائی امن معاشرتی جرائم کے بہتر تدارک کیلئے مقامی عمائدین، منتخب عوامی نمائندے، علمائے کرام اور مساجد کے آئمہ کیساتھ مل کر پیشہ ورانہ فرائض مؤثر انداز میں ادا کریں۔ ان خیالات کا اظہار ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر ڈیرہ کیپٹن ریٹائرڈ واحد محمودنے اپنے دفتر میں کرائم میٹنگ ایس ڈی پی اوز اور ایس ایچ اوز سے کیا۔ میٹنگ میں نیشنل ایکشن پلان کی عملداری، کاؤنٹر کرائم، قیام امن، خدمت عامہ کے عوامل، انتظامی امور میں پولیس کی استعداد کار بڑھانے اور فورس کے جوانوں کی فلاح و بہبود کیلئے جامع اقدام اٹھانے کے حوالے سے اہم فیصلے کئے گئے۔ اجلاس میں سب ڈویژنل پولیس آفیسران اور ایس ایچ اوز بھی موجود تھے۔ اجلاس میں ضلع بھر میں امن و امان کی مجموعی صورتحال، جرائم کی شرح، پولیس کی استعداد کار اور تھانوں میں درج مقدمات کی تفتیشی امور کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔ اس سلسلے میں جامع حکمت عملی طے کر لی گئی ہے۔ اجلاس میں خدمت عامہ اور لوگوں کی داد رسی کے لئے قائم پولیس اسسٹنز لائن، پولیس ایکسس سروسز اور DRCکی کارکردگی پر باہمی تبادلہ خیال کیا گیا اور عدالتوں میں زیر سماعت مقدمات کی تفتیش میں ہونے والی پیش رفت پر سیر حاصل بحث کی گئی اجلاس کے دوران ضلع میں امن و امان کی صورتحال اور انسداد جرائم کی شرح کو اطمینان بخش قرار دیا گیا۔اجلاس میں بتلایا گیا کہ شہریوں کے تحفظ اور حکومتی رٹ کو یقینی بنانے کے لئے نیشنل ایکشن پلان کے تمام نکات کو اس کی اصل رو ح کے مطابق عملی جامع پہنایا جائے اور مجرمانہ سرگرمیوں کے سد باب کے لئے سرچ اینڈ سٹرائیک اپریشن کو مزید مؤثر بنایا جائے۔ تھانوں کی سطح پر مطلوب اشتہاریوں اور مشکوک مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث افراد کی از سر نو فہرستیں مرتب کر کے ان کی سرکوبی کے لئے بھر پور ایکشن لیا جائے۔ امن و امان برقرار رکھنے کے لئے تمام دستیاب وسائل بروئے کار لائیں۔ اجلاس کے شرکاء پر زور دیا گیا کہ وہ ماتحت پولیس عملے کی فلاح و بہبود کیلئے جامع اقدام اٹھائیں پولیس جوانوں کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کرتے ہوئے پولیس اصلاحات کے تحت معرض وجود میں لائے گئے خدمات عامہ کے منصوبے کے ثمرات سے لوگوں کو بہتر انداز میں مستفید کریں تاکہ ان منصوبوں کا ماحاصل نظر آئے۔ حساس و آسانی سے حدف بننے والے مقامات کی سکیورٹی آڈٹ یقینی بنائیں اور کسی بھی غیر یقینی صورتحال کے پیش نظر مربوط انٹیلی جنس نظام کے تحت دیگرسیکیورٹی و انتظامی اداروں اور عوام کے ساتھ قریبی روابط استوار کئے جائیں۔ قانون و انصاف اور میرٹ کی بالا دستی کو ہر صورت مقدم رکھتے ہوئے جرائم کی منظم بیخ کنی کو یقینی بنایا جائے گا اور تھانوں میں آنے والے سائلین خصوصاََ مظلوموں کی داد رسی اور انہیں انصاف کی فراہمی میں کوئی کوتاہی ہرگز برداشت نہیں کی جائے گی۔ ڈی پی او ڈیرہ نے پولیس کو ہدایت کی کہ وہ فیلڈ میں خود جا کر عوامی مسائل سے آگاہی حاصل کرنے کیلئے زیادہ سے زیادہ کھلی کچہریوں کا انعقاد کریں اور علاقائی امن معاشرتی جرائم کے بہتر تدارک کیلئے مقامی عمائدین، منتخب عوامی نمائندے، علمائے کرام اور مساجد کے آئمہ کیساتھ مل کر پیشہ ورانہ فرائض مؤثر انداز میں ادا کریں۔ انہوں نے پولیس آفیسران کو مزید ہدایت کی کہ وہ اپنے علاقہ اختیار کی حدود کے اندر واقع مساجد و مدارس، امام بارگاہوں اور اقلیتوں کی عبادتگاہوں سمیت تمام حساس مقاما ت کی سیکیورٹی عوامل کا بذات خود جائزہ لے کر مقامات کے تحفظ کیلئے فول پروف حفاظتی اقدامات اٹھائیں اور مختلف پراجیکٹس پر کام کرنیوالے غیر ملکیوں کی حفاظت و نگرانی کئلئے وضع کردہ جامع ایس او پیز مؤثر عملداری یقینی بنائیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر