حکومتی نا اہلی ، نالائقی اور چور بازاری کی سزا کسانوں کو مل رہی ہے ،  ملک میں  کھاد کی قلت پر شہباز شریف کی کڑی تنقید 

حکومتی نا اہلی ، نالائقی اور چور بازاری کی سزا کسانوں کو مل رہی ہے ،  ملک میں  ...
حکومتی نا اہلی ، نالائقی اور چور بازاری کی سزا کسانوں کو مل رہی ہے ،  ملک میں  کھاد کی قلت پر شہباز شریف کی کڑی تنقید 

  

لاہور ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہباز شریف نے ملک میں کھاد کی قلت پر وفاقی حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ حکومتی نا اہلی ، نالائقی اور چور بازاری کی سزا کسانوں کو مل رہی ہے ۔

اپنے بیان  میں اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ ڈی اے پی اور یوریا کی سمگلنگ روکی جائے اور کسانوں کا استحصال بند کیا جائے ، کسان چیخ رہے ہیں کہ سمگلنگ ہو رہی ہے ، حکومت کہاں سوئی ہوئی ہے ، جب  علم ہے کہ عالمی منڈی میں یوریا کی قیمت زیادہ ہے تو سمگلنگ کیوں نہیں روکی گئی ، یوریا  کھاد کی قلت پاکستان تحریک انصاف کی بد انتظامی اور کرپشن کا شاخسانہ ہے ۔

مسلم لیگ ن کے صدر نے کہا کہ یوریا نہ ہونے کا مطلب زرعی پیداوار میں کمی ہے ، جس کے نتیجے میں نئے مسائل پیدا ہوں گے ،  ہمارے دور میں ڈی اے پی کی بوری 24 سو روپے کی تھی جو آج کسان کو  10 ہزار روپے میں بھی میسر نہیں ۔  حکومت کو قیمتوں پر کنٹرول ہونا ناکامی ، نا اہلی اور بد انتظامی کی انتہاہے ۔

شہباز شریف نے کہا کہ موجودہ حکومت کے پاس کپاس کی پیداوار کے بارے میں غلط اعداد و شمار اور غلط بیانی کے سوا کچھ نہیں ہے ، ہمارے  سال 16-2015 کے دور  میں کپاس کی ریکارڈ پیداوار ایک کروڑ 46 لاکھ بیل ہوئی تھی ،  سال 2015 میں مسلم لیگ ن کے وزیر اعظم نے تاریخی کسان پیکیج دیا تھا، کسانوں کو سیلاب سے ہونے والے نقصانات میں اربوں روپے امداد دی گئی تھی ۔  

شہباز شریف نے کہا کہ  ہم نے  16 لاکھ چھوٹے کسانوں کو  32 ارب روپے دیے تھے ، آج کسانون سمیت عوام کا کوئی پرسان حال نہیں ۔ 

مزید :

قومی -سیاست -